Anti Biotic Effect on National Character & Need for a Shock Therapist.

845

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


Use of Anti biotic should be rare and used as critical medical solution when absolutely necessary. Regular use of Anti Biotic makes our body less responsive or ineffective to critical medical scenarios.

If we see bloodshed, corruption of billions, incompetence & misfortunes every day, our sensitivity degrades & reaches to the level of no sensitivity just like the Anti biotic effect. It is similar to a patient who on regular Anti Biotic, one day stops responding to even heavy doses of Anti biotic. At this stage, recovery of patient depends more on a shock therapy or a miracle rather than on medicines.

Our nation is also just like this patient after years of daily dosage of killings, crimes, corruption, Injustice & misfortunes has also now stop responding to miseries. Nation now hear & see sufferings but we have got immune to any feelings & we just look away.

We now need a shock therapy to bring back the dying patient (Nation) and we need a Shock Therapist.


قومی کردار پر ہائی وولٹیج جھٹکوں کے ماہر کی ضرورت

احمد جواد

اینٹی  بایوٹک  ادویات کا شاذ و نادر استعمال سخت ضرورت کی حالت میں اور آخری چارے کے طور پر کرنا چاہئیے۔  اینٹی  بایوٹک کا وسیع استعمال ہماری جسمانی قوت مدافعت کم کر دیتا ہے یا خطرناک امراض کی صورت میں ناکارہ بنا دیتا ہے۔

جب ہم ہر روز خون ریزی، اربوں روپے کی بد عنوانی، نااہلی اور بد حالی دیکھتے ہیں تو ہماری حساسیت مدافعتی ادویہ کے اثرات کی طرح کم ہوتے ہوتے ختم ہو جاتی ہے۔ بالکل مدافعتی ادویہ کے عادی اس مریض کی طرح جس پر دوائی کی خوراک میں اضافہ کے باوجود اثر نہیں ہوتا۔ اس صورت حال میں لا علاج مریض کا انحصار دوا کی بجائے نفسیاتی جھٹکے یا کسی معجزے کے رونما ہونے پر ہوتا ہے۔

کئی برسوں سےقتل و غارت، جرائم، کرپشن، نا انصافی اور بد حالی دیکھ دیکھ کر ہماری قوم کی حالت بھی اُس مریض کی طرح ہو چکی ہے جس نے آلام پر رد عمل ظاہر کرنا چھوڑ دیا ہے۔ شدت احساس سے عاری ہماری قوم مصائب کو دیکھتی سنتی تو ہے مگر ان سے نظریں چُرانے لگی ہے۔

دم توڑتے مریض قوم کی بحالی کے لئے نفسیاتی جھٹکوں کی نوبت آچُکی ہے۔ اس کے لئے ہائی وولٹیج جھٹکوں کے ماہر کی ضرورت ہے۔