Our Basic Food Choices

480

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


We might be or might have been or would be eating donkeys, dead animals, sick animals, hormonal chickens in our country amid much hyped CPEC, Metros, Orange train, Flyovers & roads as sign of progress and prosperity. If low quality eating was not enough, we are now drinking Urea, sodium and potassium, white colour powder in the name of milk by big companies like Nestle, Olpers, Haleeb, Shakarganj and Tarang. My own highly qualified class fellow once heading a quality control department of a national institution carried out tests of supplied milk from Nestle. Milk was found with Urea, Sodium and potassium and white colour. My friend raised the issue and stopped supply of milk. A lot of hue and cry was raised based on big name of Nestle. My friend stood on his grounds, eventually Nestle asked the national institution to send their inspection team to Nestle factory. Chinese or Korean Senior representative of factory accepted the results found by my friend. He accepted short comings in their quality test technology. Nestle assured to have acquired new technology for stringent quality tests.

The owners of these milk provider companies belong to high class of Pakistan but their crime is not less than the crime of murderers of APS school children. APS murderers gave an instant death, whereas Nestle, Haleeb and others are giving slow death to our children by providing such quality of milk.

Have our ruling elites ever talked about slow death of our generation due to poisonous and low quality food.

Is there any choice for us to feed our children with pure and healthy milk?

So strong are these big names that no media will dare exposing them since they provide heavily paid ADs to media houses.

Only Social Media can unfold such bitter truth which may not offer any solution but can create awareness and identify diagnosis.

We appeal to entire Pakistan to send us any information or evidence on supply of low quality milk or Juice in any part of country supplied by these murderers. We need to make a case against them. Send your views at Pakistan.bth@gmail.com


ہماری بنیادی خوراک کا انتخاب

احمد جواد

 ہم سی پیک، میڑو، اورنج ٹرین، فلائی اوورز اور سڑکوں جیسی ترقی اور خوشحالی کی علامتوں کے شور و غوغا میں گدھے، مردہ جانوروں، بیمار جانوروں اور ہارمونی مرغیوں کا گوشت کھاتے ہیں ، یا کھاتے رہے ہیں یا کھا پائیں گے۔ ناقص معیار کی خوردنی اشیا پر ہی بس نہیں۔ہمیں نیسلے، اولپر، حلیب، شکرگنج اور ترنگ جیسے ناموں کی آڑ میں یوریا، سوڈیم، پوٹاشیم اور سفید پاوڈر ملا دودھ پلایا جاتا ہے۔میرے ایک اعلیٰ تعلیمیافتہ کلاس فیلو ایک قومی ادارے کے شعبہ کوالٹی کنٹرول کے انچارج تھے۔انہوں نے نیسلے کے فراہم کردہ دودھ کے ٹیسٹ لئے۔اس دودھ میں یوریا، سوڈیم، پوٹاشیم اور سفید پاوڈر کی ملاوٹ پائی گئی۔

میرے دوست کے مسئلہ اٹھانے پر دودھ کی فراہمی روک دی گئی۔تاہم نیسلے کے بڑے نام کی آڑ میں بہت شور و غوغا کیا گیا مگر میرے دوست اپنے موقف پر ڈٹے رہے۔ بالآخر نیسلے نے اس قومی ادارے سے اپنی معائنہ ٹیم نیسلے فیکٹری بھیجنے کی استدعا کی۔فیکٹری میں تعینات کورین یا چینی سینئر  نے میرے دوست کے نتائج کو تسلیم کر لیا۔اس نے معیار کی پرکھ کرنے کی ٹیکنالوجی کی کمزوری کا بھی اعتراف کرلیا اور سخت تجزیہ کرنے والی ٹیکنالوجی کے حصول کی بھی یقین دہانی کرائی۔

دودھ فراہم کرنے والی فیکٹریوں کے مالکان کا تعلق پاکستان کی اشرافیہ سے ہے۔مگر ان کا جرم آرمی پبلک سکول کے بچوں کے قاتلوں سےکسی طرح کم نہیں۔اے پی ایس کے قاتلوں نے بچوں کو موقع پر ہی مار دیا تھا جبکہ نیسلے، حلیب اور دیگر ادارے غیر معیاری دودھ فراہم کرکے ہمارے بچوں کو بتدریج قتل کر رہے ہیں۔کیا ہماری اشرافیہ نے زہریلے اور گھٹیا معیار کے دودھ کی فراہمی کے ساتھ ہماری سست رفتار نسل کشی کو کبھی موضوع سخن بنایا ہوگا؟ کیا ہمارے پاس بچوں کو خالص اور صحت بخش دودھ پلانے کا کوئی اور ذریعہ ہے؟

یہ دودھ کی کمپنیاں میڈیا کے اداروں کو بہت مہنگے اشتہار دیتی ہیں۔ اس لئے میڈیا ان کے خلاف لب کشائی کی جرات نہیں کرتا۔صرف سوشل میڈیا اس کڑوے سچ کو آشکار کر سکتا ہے۔ یہ کوئی حل تو شائد پیش نہ کر سکے مگر اس کی چھان بین  آگاہی تو دے سکتی ہے۔ ہم اپیل کرتے ہیں کہ پورے پاکستان میں سپلائی کئے جانے والے غیر معیاری دودھ یا جوس فراہم کرنے والے ان قاتلوں کے بارے کسی کے پاس کوئی اطلاع یا شواہد ہوں تو ہمیں بھجوائیں۔ضروریہے کہ ان کے خلاف مقدمہ دائر کیا جائے۔آپ اپنے خیالات اس ای میل ایڈریس پر ارسال کر سکتے ہیں Pakistan.bth@gmail.com: