BLAMING Yesterday does not make us better – ACTING Today makes us better – THINKING Tomorrow makes us sustainable

1379

Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/. And can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”


گذرے کل کو مورد الزام دینا ٹھیک نہیں

آج کے فیصلے بہتری لائیں گے۔ فکر فردا ہماری بقا کا باعث ہوگی

احمد جواد

اگرحضرت عمرؓ مدینہ جیسےایک چھوٹےسے قصبے سے اٹھ کر بارہ سال میں اُس وقت کی امریکہ اور روس جیسی قوی ریاستوں روم اور فارس کو تاراج کر سکتے ہیں،اگر طیب اردگان پندرہ سال میں دیوالیہ ہوتے ملک کودنیا کی چوٹی کی بیس معیشتوں میں شامل کرسکتےہیں،چین پچیس سالوں میں چالیسویں معیشت سے دنیا کی دوسری سب سے بڑی معیشت بن سکتا ہے(سالانہ فی کس آمدنی کے حساب سے سب سے بڑی معیشت)،اگر راحیل شریف دو سال میں پاکستانیوں کے دل سے عدم تحفظ کا احساس ختم کر سکتے ہیں تو مجھے سمجھ میں نہیں آتا کہ ہم آج اپنی ناکامیوں اور مصائب کا ملبہ ضیاء الحق یا بھٹو پر کیوں ڈال دیتےہیں۔

فرض کر لیں کہ ضیاء الحق بد ترین حکمران تھاجس نے پاکستان کو دہشت گردی کے چنگل میں پھنسایا اور اس کے سب کام غلط تھے۔ہم یہ کیوں نہیں سوچتے کہ اس کی کوتاہیوں اور غلطیوں کا ازالہ کرنے کے لئے تیس سال کا عرصہ کیا  کافی نہیں ہوتا ؟ہماری آج کی مشکلات ضیاء اور بھٹو کے تیس سال پہلے کئے گئے فیصلوں کی وجہ سے نہیں ہیں۔حتیٰ کہ یہ نواز شریف اور بینظیر کے دو دو ادوارکا نتیجہ بھی نہیں۔آج کی مصیبتیں زر داری (پانچ سال مرکز اور نو سال سندھ میں) اور شریفوں(چار سال مرکز اور نو سال پنجاب) کے فیصلوں کی وجہ سے ہیں جنہوں نے اس ملک پر 17سال راج کیا۔سب سے بڑھ کر یہ کہ ہم ماضی کے فیصلوں کی وجہ سے نہیں بلکہ آج کے فیصلوں کی وجہ سے مصائب کا شکار ہیں۔ایک اچھا فیصلہ جو چاہے نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد کا یا فوجی عدالتوں کے قیام کا یا  عدالتی اصلاحات کا یا پولیس کی اصلاحات کا یا انتخابی اصلاحات کا یا نظام تعلیم کی بہتری کا یا فاٹا کو خیبر پختونخوا کا حصہ بنانے کا ہوتاتو ہماری زندگیوں میں بھر پور تبدیلی آگئی ہوتی۔

ملین ڈالرسوال ہے کہ جب روس بدمعاشی سے ہماری سرحدوں پرچڑھائی کرتھا چکا، ملک میں افغان مہاجرین کا سیلاب اُمڈآ یا، امریکہ ہمیں ایف سولہ جہاز اور روپیہ پیسہ دینے کی پیشکش کرتا، فوجی امداد دیتا، مالی امداد   دیتا تو بھٹو یا نواز شریف یا بینظیر یا زرداری یا مشرف کیا کرتے؟ان کی جگہ ہم ہوتے تو ہم کیا کرتے؟ ان سب نے وہی فیصلہ کرنا تھا جو اُس وقت کیا گیا۔

الزام تراشی

ماضی کو الزام دینے سے بہتری آنے والی نہیں

عمل

آج کا اچھا عمل بہتری لائے گا

سوچ

مستقبل کے بارے سوچ بچار میں ہماری بقا ہے


BLAMING Yesterday does not make us better – ACTING Today makes us better  – THINKING Tomorrow makes us sustainable

By Ahmad Jawad

If Hazrat Umar conquered America & Russia of those times (Rome & Iran) in 12 years from a small town of Medina, if Tayyip Erdogan can bring a bankrupt country to world’s top 20 economies in 15 years, if China can become world’s second largest economy (World’s First in GDP PPR) in just 25 years from World’s 40th economy. If Raheel Sharif can remove sense of insecurity of Pakistanis in 2 years, I do not understand why we should even talk about Zia Ul Haq or even Bhutto for our non performance or troubles today.

Let’s assume Zia Ul Haq was the worst leader who turned Pakistan into a terrorist country and did everything wrong, don’t we think 30 years should be enough to rectify or clean it? Our today’s troubles is not because of 30 years old decisions by Zia or Bhutto or even two each rules of Nawaz Sharif or Benazir , our troubles today is because of our today’s decisions made by Zardari (5 years in Centre & 9 years in SINDH), Sharifs( 4 years at centre & 9 years in Punjab) and Musharraf(8 years)  who ruled this country in last 17 years. Most importantly we are mostly suffering not because of yesterday’ but we are suffering because of today. One good single decision whether implementing NAP or making Military Courts or reforming Judiciary or Police or reforming General Elections or improving Education or making FATA part of KPK will significantly change our lives. Please do not get misled or mislead others, Our Yesterday is not responsible for our today’s negligence.

It will be a million dollar question what would have Bhutto or Nawaz Sharif or Benazir or Zardari or Musharraf would have done or we ourselves in the shoes of a ruler would have done when Soviet Union reached menacingly at our borders and Afghan refugees were flooding our porous borders and America was offering us F 16, funds, military support, financial support, each of these leaders would have made the same decision.

BLAMING
Yesterday does not make us better.

ACTING
Today makes us better.

THINKING
Tomorrow makes us sustainable.