BRICS: Who was hit by the thrown Brick?

147

Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”


 کی پھینکی اینٹ سے کون ہوا گھائل BRICS

احمد جواد

خطے میں دہشت گردتنظیموں کے بارے برکس کا حالیہ اعلامیہ بڑاسوالیہ نشان  ہے

ہم صورت حال کو چین کے پس منظر سے دیکھیں یا پاکستان کے نقطہ نظر سے؟

چین کےتناظر میں تو یہ ایک ضرب کاری ہے

اور پاکستان کے زاویہ نگاہ سے یہ ہماری سفارتی ناکامی ہے

مگر کیوں؟

کیونکہ  عالمی نقطہ نظر  میں جہادی تنظیموں کا ماخذ خطے میں یا  توافغانستان ورنہ پاکستان میں پایاجاتا ہے۔کسی تنظیم کا ذکر کرو کھرُا پاکستان یا افغانستان کی طرف جاتا دکھائی دے گا۔دنیا کی نظر میں کسی دہشت گرد تنظیم کا بھارت سے کوئی تعلق نہیں اگرچہ یہ بھارت میں پنپ رہی ہو۔

آج کے دور میں دہشت گردی ایک طرز فکر کا نام ہے۔اس طرز فکر کے مطابق امریکہ کے ہاتھوں عراق، شام اور افغانستان کی تباہی دہشت گردی نہیں بلکہ یہ دہشت گردی کے خلاف ایک جنگ ہے۔دہشت گردی کی جنگ میں پاکستان کا 80,000جانوں کاضیاع اور اس پر دہشت گردی کی جڑوں کی موجودگی کا الزام اورانہیں  اکھاڑنے کے لئے ڈُو مور کی تکرار اور دہشت گردی کی جنگ میں ہماری قربانیوں کو نظر انداز کرنا بھی عالمی طرز فکر کی ذیل میں آتا ہے۔یہ طرز فکر ہی تعین کرتا ہے کہ اس جنگ میں کون ہارا ، کون جیتا۔پچھلے دو سالوں میں اپریشن ضرب عضب کے ذریعے پاکستان کی دہشت گردی کے خاتمے کے لئے کامیابی عالمی نقطہ نظر  کے مطابق کچھ بھی نہیں۔عالمی نقطہ نظر سے افغانستان میں پچھلے پندرہ سال سے نیٹو افواج کی مسلسل ناکامی کو عالمی امن کے قیام کی کوشش میں جدوجہد قرار دیا جاتا ہے۔

ہمیں عالمی نقطہ نظر کی جنگ لڑنے کے لئےخارجہ پالیسی کے زیادہ بہتر خارجہ امور کے  ماہرین اوربہتر میڈیا ماہرین کی ضرورت ہے۔مگرہمارے ہاں اس جنگ میں لڑنے کے لئے خچر استعمال کئے جارہے ہیں۔گھوڑوں کو یا تو جنگ سے دور رکھا جاتا ہے یا ان کے منہ بندکر رکھے ہیں۔

ٹرمپ نے جو کچھ ببانگ دہل کہا وہی بات برکس نے بڑی نرمی سے کہہ دی۔ہم ٹرمپ کی بات پر تو سیخ پا ء ہوگئے مگر برکس کی ہلکی پھُلکی چھترول پر بغلیں بجانے لگے۔

مزے کی بات یہ کہ اس اعلامیے میں افغان افواج کا دل رکھنے کے لئےان کی تعریف کرکے تشفی کر دی گئی مگر پاک افواج  کی کارکردگی کو بالکل نظر انداز کر دیا گیا۔ماضی قریب میں تو دہشت گردی کی جنگ میں پاک فوج کی کامیابیوں پر یورپ اور امریکہ میں راحیل شریف کے قصیدے پڑھے جاتے تھے۔ اب کیا ہو گیا ہے؟

چین نے بھارت کو گاجر دکھائی اور وہ اُچک کر اُسے مزے لے لے کر کھا گیا۔ اس پر ہم کیوں مُسکرا رہے ہیں۔سفارتی نقطہ نظر کے مطابق ہم ایک اور سفارتی جنگ ہار چکے ہیں۔ہمارے بیک فُٹ پر آنے کی وضاحت ہمیں فرنٹ فُٹ پر نہیں لا سکے گی۔ہمیں ایمپائر نے ہِٹ وکٹ ہونے پر آؤٹ قرار دے دیا ہے  اور ہم یہ بھی نہیں کہہ سکتے کہ یہ  آؤٹ ہونا بہتر تھا۔ہم پویلین کی جانب یوں اِتراتے واپس جارہے ہیں جیسے ہم نے آؤٹ ہونے سے پہلے سنچری سکور کرلی ہو۔بھئی ہم تو زیرو سکور پر ہی ہِٹ وکٹ آؤٹ ہو چکے ہیں۔

یقینی طور پر چین نے یہ قرار دار ہماری وزارت خارجہ اور اس کے اکابرین سے صلاح مشورہ کئے بغیر ہی پاس نہیں کی ہوگی۔برکس کا اعلامیہ اس قدر پریشان کنُ نہیں مگر زیادہ دُکھ اس بات کا ہے کہ ہم نے اپنی پالیسی بدل دی ہے۔ہمارا بیک فٹ جو پہلے ہی وکٹوں کو چُھو چکا ہے ہم اُس پر کٹ کھیلنے کی کوشش میں مصروف ہیں۔یہ وقت تو گیند کو فرنٹ فُٹ پر کھیلنے کا وقت تھا مگر ہم نے اُسے ایسے فراموش کردیا جس طرح اپنی کرکٹ کے آخری ایام میں شہرہ آفاق ظہیر عباس یہ شاٹ بھول گئے تھے۔

ہم نے تو زمین کی خاک چاٹ لی اس سے زیادہ نیچے ہم کیا گریں گے۔

ہاں یہ ہو سکتا ہے کہ ہم کھڑے ہو کر ڈھٹائی سے کہیں کہ ہمیں تو کچھ بھی نہیں ہوا۔اس طرح ہم لڑکپن میں کیا کرتے تھے کہ سب کے سامنے گلی میں گرِ پڑتے اور ہزیمت چھپانے کے لئے کہہ دیتے کہ مجھے تو کچھ بھی نہیں ہوا۔چوٹ سے محفوظ رہنے کا ناٹک کرنے سے درد تو چُھپا نہیں کرتا۔

زمین جانتی ہے کہ ہم کس بُری طرح سے گرِے ہیں مگر کوئی زمین سے گواہی نہیں مانگتا کیونکہ ہم زمین پر گرِتے ہیں تالیاں پیٹنے لگتے ہیں۔


BRICS: Who was hit by the thrown Brick?

By Ahmad Jawad

Big Question on recent BRICS resolution on terror outfits in the region:

Do we evaluate things from Chinese perspective or Pakistani perspective?

From Chinese perspective, it’s a master stroke.

From Pakistani perspective, it’s a diplomatic failure.

Why?

because Jahadi outfits in this region either finds its origin in Afghanistan or Pakistan (Global perspective). Any mention of these outfits means pointing towards Pakistan & Afghanistan. World does not see these terror outfits having any link to India, even if it comes from India.

Terrorism in today’s world is a game of perception. Under this perception, US destruction of Iraq, Syria & Afghanistan is not terrorism but fighting against terrorism. Pakistan’s loss of 80,000 lives in war against terror is clouded with ” Do More” and blame of terrorism roots in Pakistan is global perspective than any consideration to our losses in a war against terrorism. Perception warfare decides who is loser? Who is winner? Pakistan’s victory against terrorism within two year under Zarb Azab is not global perspective. NATO’s failure in Afghanistan despite 15 years war against terrorism is again not global perspective. It is considered contribution towards global peace.

We need to have better foreign policy experts, better media experts to fight global war of perceptions. We have only mules to fight such warfare as horses are kept away or kept them shut.

What trump said openly, BRICS said softly, we are upset on Trump but we are happy with Soft “Chattrole”(beating) by BRICS.

Interestingly, in this resolution, Afghanistan was duly compensated by praising Afghan Defense Forces while Pakistan Army was totally missed out. It is just recent past when Raheel Sharif was praised in Europe and USA for the success of Pakistan Army against terrorism. What happened now?

So Chinese offered the carrot to India and India ate it with relish, why are we smiling? we lost one more diplomatic vision and diplomatic battle. Justifying our back foot won’t place us on front foot. We are already ” Hit Wicket”, umpire gave us “out”, we can’t say it was good to “out”. We are going back to pavilion as if we made a century before getting out. We were hit wicket on Zero.

Yes Chinese did not pas s this resolution without an understanding with Pakistan’s ministry of foreign Affairs and the real players of foreign policy. It’s not as much sad what BRICS declared, its more sad that we changed our policy and we are trying to play a nice cut with back foot, while back foot already hitting wickets. It was time to play on front foot, something legendary ” Zaheer Abbas forgot in his last days of cricket.

We don’t further fall when we hit the ground.
Yes, we may get up and pose ” I am unhurt” like we used to do in our youth to avoid embarrassment of falling in a street in front of everybody, but pain never disappeared despite posing unhurt.

Ground is the witness, that we fell badly but nobody asks ground to act as witness, we just start clapping on the pose we give after fall.

Facebook Comments