Bhutto Zinda Hai – AIDS Bhi Zinda Ho gayee.

531

By AHMAD JAWAD


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


Larkana is the city of Bhutto family & Fort of PPP. PPP has ruled this country for almost two decades as a Federal Government & Provincial Government. Larkana is the Flag constituency of PPP. Founder of PPP, Zulfiqar Ali Bhutto is also buried here. Zardari & Bilawal also shout here every year ” Bhutto Zinda Hai”.

Today Larkana is producing AIDS patients not by the mistake of patients but due to poorly maintained dialysis machines.

26 patients is the official data, how many must have died without ever diagnosed for how many years? Nobody knows.

40 years of democracy under two families is giving us AIDS from the place where patients go to receive treatment & wellness. But what’s the hurry, democracy takes its time to take roots.Just stay away from dialysis machines till fruits of democracy reaches you. This is the reason leaders of democracy take their treatment from abroad. Their survival is crucial to the survival of democracy.

Bhutto Zinda Hai, Sharifs Bhi Zinda Hein, Democracy Bhi Zinda Hai Aur AIDS Bhi Zinda hu Rahi Hai


بھٹو زندہ ہے  اور ایڈز بھی زندہ ہو رہی ہے

احمد جواد

لاڑکانہ بھٹو خاندان کا آبائی شہر اور پاکستان پیپلز پارٹی کا قلعہ ہے۔پیپلز پارٹی نے دو عشروں تک وفاقی اور صوبائی سطح پر حکومت کی ہے۔لاڑکانہ پیپلز پارٹی کا گٖڑھ ہے۔پیپلز پارٹی کے بانی ذوالفقار علی بھٹو یہاں دفن ہیں ۔زرداری اور بلاول ہر سال یہاں بھٹو زندہ ہے کے نعرے لگاتے ہیں۔

آج لاڑکانہ میں مریضوں کی غلطیوں سے نہیں ڈائیلاسسز مشینوں کی ناقص دیکھ بھال سے ایڈز کے مریض پیدا ہو رہے ہیں۔سرکاری اعداد و شمار کے مطابق 26اموات ہو چکی ہیں۔کتنے سالوں سے بغیرتشخیص کتنی اموات ہو چکیں؟ یہ کوئی اندازہ نہیں لگا سکتا۔

دو خاندانوں کے زیر سایہ جمہوریت میں ہمیں ایڈز کی بیماری وہاں سے ملتی ہے جہاں  مریض علاج اور صحتیابی کے لئے جاتے ہیں۔لیکن جلدی کیا ہے؟جمہوریت کی جڑیں مضبوط ہونے میں کچھ وقت تو لگتا ہے۔بس جمہوریت  کے ثمرات آپ تک پہنچنے تک ڈائیلاسسز مشینوں سے دور رہیں۔یہی وجہ ہے کہ جمہوری رہنما اپنا علاج بیرونی ممالک سے کراتے ہیں کیونکہ انکی زندگی جمہوریت کی بقا کے لئے انتہائی ضروری ہے۔

بھٹو زندہ ہے، شریف بھی زندہ ہیں، جمہوریت بھی زندہ ہے اور ایڈز بھی زندہ ہو رہی ہے۔

Facebook Comments