CPEC must continue BUT…

61

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”


Nobody said to cancel CPEC but there is no harm in revisiting the CPEC agreement for transparency & improving national interest by freezing it for 6 months to one year.

CPEC is not sacred holy book. It can be reviewed in national interest.

Example of Malaysia is applicable to every country in the world that has honest & clear headed leadership which can take brave decisions in national interest. Mahathir has frozen 22 Bn$ Chinese projects for the same reasons of revisiting. He even renegotiated LRT (Light Railway Transport) contract with Chinese firm and brought it down to 16 Billion$ from agreed 20 Billion $.

Has Trump not taken bold trade decisions against his own close allies Canada, Germany,Japan, Mexico, Australia besides against China in national interest?

Imran Khan is always fast learner and Inshallah he will take all bold decisions in due course of time in national interest.

In the meantime, we must study what happened to Sri Lanka when it leased out its Port to China for building it. No friendship guarantees insulation of our interest. We must guard them ourselves without any fear or obligation.

CPEC must continue but reviewing of agreement must be done keeping in view most corrupt people at helm of affairs at the time of formulation of agreement.


!!!!!…سی پیک جاری رہنا چاہئے مگر


احمد جواد

سی پیک کی منسوخی کے بارےکوئی سوچ بھی نہیں سکتا مگر اس میں کیا حرج ہے اگر نظر ثانی ، شفافیت اور قومی مفاد کی بہتری کی غرض سے اس منصوبے کو چھ ماہ یا ایک سال کے لئے منجمد کر دیا جائے۔

سی پیک کوئی آسمانی صحیفہ نہیں۔ اس کا قومی مفاد میں جائزہ لیا جا سکتا ہے۔

دنیا کے ہر ملک میں جہاں قومی مفاد میں دلیرانہ فیصلے کرنے والی ایماندار اورہوشمند قیادت موجود ہے اس کےلئے ملائشیا کی مثال بالکل قابل عمل ہے۔مہاتیر محمد نے 22ارب ڈالر کے چینی منصوبےنظر ثانی کی بنا پر منجمد کردیئے۔نہ صرف یہ بلکہ اُس نے لائٹ ریلوے ٹرانسپورٹ(ایل آر ٹی) کے چینی کمپنی کے ساتھ کئے گئے معاہدے پر دوبارہ گفت شنید کی اور اس کی 20ارب ڈالر قیمت سے کم کرکے 16ارب ڈالر تک لے آئے۔

کیا ٹرمپ نے قومی مفاد کو مقدم رکھتے ہوئے چین کے علاوہ اپنے اتحادیوں کینیڈا، جرمنی، جاپان، میکسیکو اور آسٹریلیا کے ساتھ تجارتی معاہدوں پر دلیرانہ فیصلے نہیں کئے؟

عمران خان سبق سیکھنے میں بہت مستعد ہیں اور وہ انشاء اللہ وقت آنے پر قومی مفاد میں دلیرانہ فیصلے کریں گے۔

اس دوران ہمیں یہ بات ذہن نشین رکھنی چاہئے کہ جب سری لنکا نے اپنی بندرگاہ کی تعمیر کا کام چین کو سونپا تو سری لنکاکے ساتھ کیا سلوک ہوا۔دوستی کا کوئی بھی بلند و بانگ دعویٰ ہمارے قومی مفاد کے تحفظ کو یقینی نہیں بنا سکتا۔ ہمیں کسی مجبوری اور خوف کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اپنے مفادات کا خود تحفظ کرنا ہے۔

سی پیک لازماً جاری رہنا چاہئے مگر اِن معاہدوں کی منظوری کے وقت ان کے پیچھے ہمارے انتہائی کرپٹ ترین لوگ کار فرما تھے۔ ان وجوہات کے پیش نظرسی پیک معاہدوں پر نظر ثانی ہونی چاہئے۔

Facebook Comments