Did you ever compare Orange with Apple, if not visit Pakistan and see magic of Pakistani Journalism.

1011
.

Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”


موازنہ

کیا آپ نے کبھی مالٹے کاسیب سے موازنہ کیا، اگر نہیں تو پاکستان آکر پاکستانی صحافت کا جادو دیکھیں

احمد جواد

کچھ صحافی اور پاکستان مسلم لیگ(ن) کے سیاسی سگ شریف خاندان کےکرپشن کیس پر پردہ ڈالنے کے لئے عمران خان کے ذاتی مالی اثاثوں کے احتساب کے مقدمے سے اس کی مماثلت بیان کرتے ہیں۔

یہ صحافتی جادوگری ہی ہو سکتی ہے ایک ایسے شخص کے مالیاتی احتساب کے کیس میں مماثلت تلاش کی جائے جو اپنے بھائی  کے ہمراہ پچیس برس تک وزیر خزانہ، وزیر اعلیٰ اور وزیر اعظم رہ چکا ہو۔جس کا شمار بین الاقوامی پانامہ  کرپشن سکینڈل  میں ملوث چوٹی کے کرپٹ افراد میں ہوتا ہو۔جس کو عدالت عظمیٰ نے گاڈ فادر کا القاب دیا ہو۔جس کو سب سے بڑی عدالت نے بے ایمانی کےالزام پر نا اہل قرار دیا ہو۔جس کے بیٹوں اور بیٹی کے نام اربوں ڈالر کی جائیدادیں ہوں۔جو ملک میں بیش قیمت اور پر تعیش محلات میں رہتا ہو۔جس پر رقومات بیرون ملک منتقل کرنے پر منی لانڈرنگ کے الزامات عائد کئے گئے ہوں۔

اور

ایک ایسا شخص جو زندگی میں کسی سرکاری عہدے پر فائز نہ رہا ہو، جس نے زندگی بھر کوئی کاروبار نہیں کیا۔جس کے ذرائع آمدن بیرون ملک کرکٹ کھیلنے، اشتہارات، کمنٹری،کتابیں لکھنے، فلیٹ کےکرائے، بنی گالا میں کسی جائیداد کی فروخت اور وراثتی چند سو ایکٹر پر مشتمل زرعی زمین کی آمدنی  پر مشتمل ہوں۔جس کے ملک سے باہر نہ کوئی بینک اکاؤنٹ ہوں نہ کوئی جائیداد۔ جو بیرون ملک کمائی کا ایک ایک پیسہ پاکستان لے کر آیا ہو۔

ان دونوں مثالوں میں مماثلت تلاش کرنے کے لئے صحافتی جادوگری کا کمال درکار ہے۔ ورنہ ایک دل، دماغ اور ضمیر کی موجودگی میں یہ موازنہ عبث ہوگا۔اس طرح کے موازنوں کا مقصد شریف اور زرداری خاندانوں کی کرپشن سے توجہ ہٹانے کے لئے لوگوں کی آنکھوں میں دھول جھونکنا ہوتا ہے۔

وہ دن گئے جب صحافت میں گمراہ کن تصوّرات گھڑے جاتے تھے۔ آج کے دور میں سوشل میڈیا اس طرح کے احمقانہ اقدام  کرنے والوں کو بے نقاب کر کے سب کے سامنے ننگا کر دیتا ہے۔اس طرح کے صحافیوں کو مشورہ ہے کہ اگر ان میں رتی بھر شرم ہے تو خود کو بے لباس نہ ہونے دیں اور سر عام ننگا ہونے سے احتراز کریں۔

ایسے صحافیوں پر خدا کی لعنت ہو اور وہ جہنم رسید کئے جائیں۔


Did you ever compare Orange with Apple, if not visit Pakistan and see magic of Pakistani Journalism.

By Ahmad Jawad

Some journalist & PMLN political dogs try to shield corruption of Sharifs by drawing similarity with cases of personal financial accountability of assets of Imran Khan.

It must be magic of journalism which can draw similarity between financial accountability of a person who is in power with positions like Finance Minister, CM, PM along with his brother for 25 years, who is top corrupt person under internationally recognised Panama scandal, who is declared God Father by highest court, who is disqualified under charges of dishonesty by highest court, who has billions of dollars property in the name of his sons & daughter and who lives in the most expensive & extravagant residence in the country, who is accused for money laundering and that too taking money outside of Pakistan.

AND

A person who has never held any public office in his entire life, who had never done any business in his entire life, whose income was mainly of an internationally renowned cricketer mostly abroad, Ads, commentary, book writing, rental of a flat, sale of some of his property in Bani Gala, agriculture income of few hundred acres of land mostly inherited. Who has no property or account anywhere in the world and who has brought every penny he earned abroad back to Pakistan.

One needs more than a magic of journalism to draw comparison between two examples. You not only need to “have a heart”, you also need to “have a brain” and “have a conscious” to draw such comparisons. Such comparisons are only meant to disillusion public from real issues of corruption by Sharifs & Zardaris.

Gone are the days when journalism could create misleading perceptions, now they get exposed by social media with one wrong move and journalist is exposed like a naked person standing in open. Such journalist are advised to wear your clothes if you have any shame and never take them off again.

May Allah bring curse on such journalist and send them to hell.