FALL OF ONE TRUMP IN USA & RISE OF ANOTHER TRUMP IN GERMANY

437

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


while the world saw Trump losing his presidential campaign, credit goes to American nation to respond to unethical & immoral gestures of Trump from a past video.

We have seen the humane side of Angela Merkel in her last tenure while taking stand with immigrants & paying the cost of her feelings for humanity by losing elections in her own constituency. Now we are seeing the opposite of Angela Merkel happening in Germany, it’s rise of another Trump but this time in Germany. Jens Spahn who is seen as replacement to Angela Merkel is making headlines for his discriminatory statements against Muslims.

He refused to meet any woman in ” Burqa”.

He showed his disappointment over Turkish support for Tayyip Erdogan by asking Turkish people in Germany not to hold any Pro Erdogan rally in Germany.

He has proposed to revise the immigration relaxation to Turkish people.

Is it rise of another Trump or rise of Hitler? A question which can find its answers in the response of Jens Spahn in the coming days. American nation has taken its stance against such extreme element, let’s see how Germans respond to such racism


 

ایک ٹرمپ امریکہ میں زوال پذیر ، دوسرا ٹرمپ جرمنی میں طلوع ہورہا ہے

احمد جواد  

دنیا نے ٹرمپ کو صدارتی مہم میں ہارتے دیکھا۔یہ ٹرمپ کی ماضی کی ایک ویڈیو میں غیر اخلاقی حرکات پرامریکی قوم کا جواب تھا۔

ہم نے  دیکھا کہ جرمنی کی انجلا مارکل نے  دوران اقتدار تارکین وطن کا ساتھ دینے اور انسانیت بھرے اپنے احساسات کی قیمت اپنے ہی حلقہ میں انتخابی ہار سے چکائی۔یہاں ہم دیکھتے ہیں کے انجلا مارکل کے بر عکس  جرمنی میں کیا ہورہا ہے ۔یہاں ایک اور ٹرمپ ابھر رہا ہے۔جنز سپاہن جو انجلا مارکل کی جکہ لینے کو ہے وہ مسلمانوں کے خلاف امتیازی سلوک کے بیانات  سے شہ سرخیوں کی زینت بنا ہوا ہے۔

اس نے برقع پوش خواتین سے ملنے سے انکار کر دیا۔اس نے ترک عوام میں طیب اردگان کی پذیرائی پر ما یوسی کا اظہار کیا اورجرمنی میں رہائش پذیر ترکوں سے کہا کہ طیب اردگان کی حمائت میں جرمنی میں ریلیاں نہ نکالی جائیں۔اس نے ترک تارکین وطن کو ملنے والی سہولتوں پر نظر ثانی کی تجویز دی ہے۔

یہ ایک جرمن ٹرمپ کا آغاز ہے کہ ہٹلرکی آمد؟ یہ وہ سوال ہے جس کا جواب آنے والے دنوں Jens Spahn کے طرز عمل سے ملے گا۔امریکی قوم نے تو انتہا پسند عناصر کے خلاف اپناموقف واضح کر دیا۔اب دیکھنا ہے کہ جرمن قوم اس نسل پرستی کا کیا جواب دیتی ہے۔

Facebook Comments