Foreign hand is not a joke but history of painful moments

1899
.

By Ahmad Jawad

Those who hate the theory of “Foreign Hands in Pakistan” must listen the history of foreign hands in this video.

We as a nation like to sleep for a half a century & never reaching truth, finally truth comes from America which disclose its secret files after every 50 years. What a great country is America.

Foreign hands is not a joke when America accepts killing your one of the great founding member of independence of Pakistan, the first PM of Pakistan, Liaquat Ali Khan.

Foreign hands is not a joke when Sitting PM of India announce their role in dividing Pakistan at the celebration ceremony of basically division of Pakistan but officially Independence of Bangladesh.

Foreign hand is not joke when Commander Kulbhushan Yadav of Indian Navy is caught in Baluchistan for organising terrorist activities in Pakistan.

Foreign hand is not a joke when foreign funds from India are supplied to Altaf Hussain in UK by India & proved by ScotLand Yard.

Foreign hands is not joke when workers of MQM confess taking terrorist training & funds from India.

Foreign hand might be a joke for friends of foreign hands. Mahmood Achakzai is just tip of iceberg full of such friends in Media, Politics, Showbiz, NGOs and Think Tanks.

The biggest question which might be asked from an honourable nation & Government, ” If you come to know that your leader & First PM was conspired to be killed by a foreign country, and it is now accepted by the foreign country, what should be the response of such a nation.

An honourable Government will investigate such information & would seek apology from foreign country.

Second Question is ” Did any of our media raised this issue? Obviously we have a link from Arab News here.


Declassified Papers Shed Light on US Role in Liaquat’s Murder

Author: Syed Rashid Husain, Arab News
Publication Date: Tue, 2006-07-18

ALKHOBAR, 18 July 2006 — Oil, Iran and air bases, seem to be issues of recent times. Not indeed. It was some 55 years back that these issues were very much in play and a recently declassified document indicates that these were the reasons behind the assassination of Liaquat Ali Khan, Pakistan’s first prime minister on Oct. 16, 1951.

Like a number of other high-profile killings, the assassination of Liaquat Ali Khan, has also remained a mystery. Conspiracy theories abound, yet are difficult to substantiate.

A recent declassified document from the US State Department brings to light some interesting facts. According to the document, a telegram was sent by the American Embassy in New Delhi on Oct. 30, 1951.

“Is Liaquat Ali Khan’s assassination a result of a deep-laid American conspiracy?” The telegram from the US Embassy in New Delhi carried the summary of an article published in the Urdu daily of Bhopal, “Nadeem” on Oct. 24, 1951, charging the US with the responsibility of Khan’s death.

The summary then points to the facts raised in the Nadeem article, “It was neither a local incident nor connected with the Pashtoonistan movement (as some may have believed then). It had behind it a deep-rooted conspiracy and recognizable hand.”

The article then says that the then Afghan government “knew about the conspiracy and the assassin was an Afghan, yet, the plot was hatched neither in Kabul nor in Karachi (the then capital of Pakistan).”

The declassified document reveals that the day before assassination, the secretary to the American ambassador in Karachi absent-mindedly jotted down “holiday” for Oct. 19 in a table diary and then immediately struck it off.

Following the secretary’s departure, Mohammad Hussain, a Pakistani employee at the American Embassy in Karachi asked the secretary’s British clerk about the holiday. The clerk described it as a possible slip. “Mistake meaningful,” however, because “the secretary knew the embassy would be closed (on) Oct. 17 (sic) although no American or Pakistani holiday was scheduled then to fall that day.

The story in Nadeem then points to another fact, as given in the declassified document. The American ambassador (in Karachi) offered condolences to Liaquat’s wife (Raana Liaquat Ali Khan) on the phone, some three and a half minutes before even the Governor General of Pakistan Khawaja Nazimuddin managed to offer his condolences. This was despite the fact that the governor general was the first to be informed (of the killing) by the Rawalpindi authorities. Indeed with no mobile connection, no live transmissions, even no TV, those were different days and the flow of information was much slower than today. The question that the newspaper article thus tried to raise was how did the American ambassador come to know of the assassination before the governor general of Pakistan found out?

The newspaper article, as summarized by the declassified US document, then discusses the possible reason for the disenchantment of the US and the UK governments with the Pakistan prime minister and his government. Liaquat was not ready to toe the US line, the newspaper pointed out and hence the US wanted him eliminated.

“While the UK was pressing Pakistan for support on the issue of Iran, the US demanded Pakistan use its influence in Tehran and persuade it to transfer control of its oil fields to the US (oil apparently has remained a major issue with the Americans ever since, especially while Mohammad Mosaddeq was in power in Tehran then).

According to the article, Liaquat Ali Khan declined to accede to the request. “The US then threatened to annul the secret pact on Kashmir (between Pakistan and the US). Liaquat replied that Pakistan has annexed half of Kashmir without American support and would be able to take the other half too.” Not only that, Prime Minister Liaquat Ali Khan also demanded that the US vacate air bases in Pakistan.

“Liaquat’s demand was a bombshell for Washington. Americans who had been dreaming of conquering Soviet Russia from Pakistan air bases were flabbergasted,” the article emphasized. And hence the plot to kill Liaquat was hatched, says the article.

However, “the US wanted a Muslim assassin, so as to obviate international complications. The US could not find a traitor in Pakistan (apparently for the reason that the new country was then brimming with nationalistic pride and hope for future),” the article added.

The US then turned to Kabul. “Washington contacted the US Embassy in Kabul. They in turn got in touch with Pashtoonistan leaders, pointing to Liaquat as their only hurdle and assuring them that if some of them could kill Liaquat, the US would undertake the task of establishing Pashtoonistan by 1952.”

At this the “Pashtoon leaders induced Akbar to take the job and also made arrangements for him to be killed immediately after so as to conceal the conspiracy. The Pakistani currency recovered from the assassin’s body also reveal that others were also involved. Due to already strained relations between Pakistan and Afghanistan no currency exchange was then taking place between the two countries. Hence only the “American Embassy (in Kabul) could have supplied the Pakistani currency notes to the assassin,” the summary argued.

The article also mentioned that the cartridges recovered from the body of the assassinated Pakistani premier were US made. The type of bullet used to kill the Pakistani prime minister were in “use by high-ranking American officers”, and were “not usually available in the market”. The rest is for us to deduce.

The article then summarized that all these facts prove that the real culprit behind the killing was the US, which had committed similar acts in the Middle East as well.

There are many parallels between then and now. And all this could not be just a matter of chance. Oil, assassinations, dollars, Iran, air bases, all these sound familiar even today. Fifty years have passed, yet things may not have really changed.


 

بیرونی ہاتھ مذاق نہیں بلکہ دردناک لمحوں کی تاریخ ہے

 

جنہیں پاکستان میں بیرونی ہاتھ کے فلسفے سے  نفرت ہے وہ اس وڈیو میں پنہاں بیرونی ہاتھ کو بغور دیکھیں۔بطور قوم ہم نصف صدی تک خواب غفلت میں پڑے رہتے ہیں اور حقائق تک نہیں پہنچ پاتے۔پھر جب ہر پچاس برس بعد امریکہ اپنے خفیہ راز اافشا کرتا ہے تو ہم پر سچائی آشکار ہوتی ہے۔امریکہ بھی کیا عظیم ملک ہے!

بیرونی ہاتھ مذاق نہیں رہتا جب امریکہ پاکستا ن کے پہلے وزیر اعظم اور تحریک آزادی کے بانی رکن کےقتل کا اقرار کرتا ہے۔

بیرونی ہاتھ مذاق نہیں ہوتا جب بنگلہ دیش کے یوم آزادی کی تقریب میں بھارتی وزیر اعظم پاکستان کی تقسیم میں ملوث ہونے کا اقرار کرتا ہے۔

بیرونی ہاتھ مذاق نہیں کیونکہ بھارتی نیوی کا کمانڈر پاکستانی علاقے بلوچستان میں دہشت گرد کاروائیاں کرنے پر پکڑا جا چکا ہے۔

بیرونی ہاتھ مذاق نہیں کیونکہ بھارت سے برطانیہ میں الطاف حسین کو رقوم کی فراہمی سکاٹ لینڈ یارڈ ثابت کر چکا ہے۔

جب ایم کیو ایم کے کارکنان بھارت سے تربیت اور رقوم لینے کا اقرار کرتے ہیں تو بیرونی ہاتھ مذاق نہیں ہوتا۔

بیرونی ہاتھ کے دوستوں کے لئے بیرونی ہاتھ مذاق ہی ہوگا۔ میڈیا، سیاست، فلمی دنیا، این جی او تنظیمیں او ر تھنک ٹینک میں بھرے ہوئے  بیرونی ہاتھ کے دوستوں میں سےمحمود اچکزئی ایک مہرہ ہے۔

اکر ایک غیرت مند قوم اور حکومت سے پوچھا جائے کہ ایک غیر ملک نے مان لیا کہ اس نے سازش کرکے آپ کےپہلے وزیر اعظم کو قتل کرا دیا تو یہ قوم کیا جواب دے گی۔

با عزت قوم تو اس اطلاع پر تحقیقات کرے گی اور اُس قوم سے معافی مانگنے کا تقاضا کرے گی۔دوسرا سوال یہ ہے کہ کیا میڈیا نے اس مسئلے کو اجاگر کیا۔ ہمیں تو عرب نیوز کے توسط سے یہ معلوم ہوا ہے۔


 اخفا کی گئی دستاویزات لیاقت علی خان کے قتل میں امریکہ کے ملوث ہونے پر روشنی ڈالتے ہیں

مضمون نگار: سید راشد حسین،                   عرب نیوز  میں  18جولائی 2006ء بروز منگل شائع ہوا

الخُبر، 18جولائی        2006ء:  تیل، ایران اور ہوائی اڈے  کیا واقعی آج کے دور کے معاملات ہیں۔ آج سے پچپن برس پہلے بھی یہ معاملات کھیل کا حصہ تھے۔حال ہی میں اافشا کی گئی امریکی دستاویز سے پتہ چلتا ہے کہ 16اکتوبر 1951ءمیں پاکستان کے پہلے وزیر اعظم لیا قت علی خان کے قتل کے پیچھے بھی یہی محرکات تھے۔دوسری اعلیٰ شخصیات کی اموات کی طرح لیاقت علی خان کا قتل بھی ایک معمہ بنا رہا۔سازش کی بو تو آرہی تھی مگراس کے ثبوت ملنے محال تھے۔

حال ہی میں امریکہ کے محکمہ خارجہ کی جانب سے ظاہر کی گئی ایک خفیہ دستاویز کی روشنی میں حقائق کا پتہ چلا ہے۔اس کے مطابق 30اکتوبر 1951میں نئی دلی میں امریکی  سفارت خانے سے ایک تار بھیجا گیا تھا۔اس تار میں ایک مضمون کا خلاصہ درج کیا گیا تھا جس کا عنوان تھا کہ کیا لیاقت علی خان کا قتل امریکہ کی گہری سازش کا نتیجہ تھا؟۔یہ مضمون بھوپال کے اردو روزنامہ ندیم میں 24اکتوبر 9151کو شائع ہوا جس میں امریکہ کو لیاقت علی خان کے قتل کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا۔

روزنامہ ندیم کے حقائق کو سامنے لاتے ہوئے تار کا خلاصہ اشارہ کرتا ہے کہ “یہ نہ تو مقامی واقعہ تھا نہ پشتونستان کی تحریک سے جڑا ہوا تھا جیسا کہ کچھ لوگوں کا خیال تھا۔اس گہری سازش کے پیچھے خفیہ ہاتھ قابل شناخت ہے”۔

اس کے بعد مضمون اشارہ کرتا ہے کہ اُس وقت کی افغان حکومت کو “اس سازش کے بارے پتہ تھا کیونکہ قاتل افغان باشندہ تھا۔ تاہم سازش نہ کابل میں  نہ اس وقت پاکستان کے دارالحکومت کراچی میں تیار کی گئی”۔یہ  دستاویز ظاہر کرتی ہے کہ قتل سے ایک دن پہلے کراچی میں امریکی سفیر کے سیکرٹری نے بے توجہی سے ٹیبل ڈائری پر 19اکتوبر کو چھٹی کا نشان لگا دیا پھر فوراً اس کی تنسیخ کردی۔کراچی میں امریکن سفارت خانے کے پاکستانی ملازم محمد حسین نے سیکرٹری کے برطانوی معاون سے اس  کاغذ پر لکھی چھٹی کے بارے استفسار کیا۔یہ ایک معنی خیز غلطی تھی  کیونکہ سیکرٹری کو معلوم تھا کہ 17 اکتوبر کو سفارت خانہ بند ہوگاحالانکہ اس تاریخ کو ئی پاکستانی یا امریکن چھٹی نہیں پڑتی تھی۔

اس کے بعد روزنامہ ندیم خفیہ دستاویز میں درج ایک اور حقیقت کی طرف کرتا ہے۔اس حقیقت کے باوجود کہ راولپنڈی کے حکام نے قتل کے بارے سب سے پہلے گورنر جنرل کو مطلع  کیا تھا، کراچی میں امریکن سفیر نے پاکستان کے گورنر جنرل خواجہ ناظم الدین سے بھی ساڑھے تین منٹ پہلے لیاقت علی خان کی اہلیہ سے فون پر تعزیت کی۔حالانکہ اس وقت نہ موبائل فون تھے، نہ ٹی وی تھا  اورنہ براہ راست نشریات۔آجکل کے مقابلے میں ان دنوں معلومات کی فراہمی بہت سست ہوا کرتی تھی۔اخبار کے مضمون میں یہ سوال اٹھانے کی کوشش کی کہ گورنر جنرل کو خبر ہونے سے پہلے امریکن سفیر کو کیسے قتل کا پتہ چل گیا؟

خفیہ دستاویز کے خلاصے کے مطابق اخبار کا مضون وزیر اعظم پاکستان اور ان کی حکومت کے بارے برطانوی اور امریکی حکومتوں کی شکر رنجی کی وجوہات کو زیر بحث لاتا ہے۔اخبار کا کہنا ہے کہ لیاقت علی خان امریکی ایجنڈے پر عمل درآمد کے لئے تیار نہ تھے اس لئے امریکہ انہیں راستے سے ہٹانا چاہتا تھا۔

جب برطانیہ پاکستان پر ایران کے مسئلے کے حل کے لئے دباو ڈال رہا تھا، امریکہ نے مطالبہ کیا کہ پاکستان ایران پر تیل کے کنووں کا کنٹرول امریکہ کے حوالے کرنے کے لئےاپنا اثر رسوخ استعمال کرے(ایران میں  محمدمصدق کے دور اقتدار سے ہمیشہ تیل  امرکہ کے لئے بڑا مسئلہ  رہا)۔ مضمون کے مطابق لیاقت علی خان نے  امریکی درخواست کوتسلیم کرنے سے انکار کردیا۔ اس پر امریکہ نے پاکستان اور امریکہ میں طے شدہ خفیہ کشمیر سمجھوتے کی تنسیخ کی دھمکی دی۔ لیاقت علی خان نے جواب دیا کہ پاکستان نے امریکی مدد کے بغیر آدھے کشمیر کا الحاق کر لیا ہے اور باقی نصف کشمیر بھی حاصل کر لے گا۔اسی پر بس نہیں، وزیر اعظم لیاقت علی خان نے  پاکستان میں امریکی اڈے خالی کرنے کا بھی مطالبہ کر دیا۔اخبار میں اس بات پر زور دیا گیا کہ لیاقت علی خان کا یہ مطالبہ واشنگٹن پر بجلی بن کر گرا۔ امریکی جو پاکستان میں امریکی اڈوں سے روس کو فتح کرنے کے خواب دیکھ رہے تھے بھونچکے رہ گئے۔مضمون کے مطابق اس  وقت  لیاقت علی خان کو قتل کرنے کا منصوبہ بنایا گیا۔

مضمون میں بتایا گیا کہ عالمی پیچیدگیوں سےبچنے کے لئے امریکہ چاہتا تھا کہ قاتل مسلمان ہونا چاہئے۔  چونکہ نو آزاد ملک میں سہانےمستقبل کی امید اور قوم پرستی   کے جذبات عروج پر تھے اس لئے امریکہ کو پاکستان سے کوئی غدار نہ مل سکا ۔اس وقت امریکہ نے کابل کا رخ کیا۔واشنگٹن نے کابل میں امریکی سفارت خانے سے رابطہ کیا۔اس کے لئے پشتون رہنماوں سے مل کر انہیں بتایا کہ  ان کے راستے میں ایک رکاوٹ ہے اور وہ ہیں لیاقت علی خان۔انہیں یقین دہانی کرائی گئی کہ اگر ان میں سے کوئی لیاقت علی خان کو قتل کردے تو امریکہ  1952ءتک  پشتونستان کے قیام کا وعدہ کرتا ہے۔

اس پر پشتوں رہنماوں نے یہ کام سر انجام دینے کے لئے سید اکبر کو رضامند کرلیا اور اس بات سے بھی اتفاق کر لیا کہ سازش کو خفیہ رکھنے کے لئے سید اکبر کو ماردیا جائے۔اس کی لاش سے ملنےوالی پاکستانی کرنسی سے بھی اندازہ ہوتا ہے کہ اس  میں دیگر لوگ بھی ملوث تھے۔وجہ یہ کہ اس وقت پاکستان اور افغانستان کے کشیدہ تعلقات کی وجہ سے دونوں ممالک میں کرنسی کاتبادلہ نہیں ہو رہا تھا۔مضمون کے خلاصے میں دلیل دی گئی کہ کابل میں امریکی سفارت خانے نے قاتل کو پاکستانی کرنسی فراہم کی ہوگی۔

مضمون میں یہ بھی بتایا گیا کہ پاکستان کے مقتول وزیراعظم کی میت کے پاس ملنے والے کارتوس بھی امریکی ساخت کے تھے۔وزیر اعظم لیاقت علی خان کے قتل میں استعمال ہونے والی گولیاں بھی  اعلیٰ امریکی  افسران کےاستعمال میں آنے والے اسلحے میں استعمال ہوتی تھیں۔باقی سب کچھ ہمارے سامنے ہے جس سے ہم نے نتیجہ اخذ کرنا ہے۔

مضمون کی تلخیص کرکے بتایا گیا کہ تما م شواہد ثابت کرتے ہیں کہ اس قتل کا م اصل مجرم امریکہ تھا جس نے مشرق وسطیٰ میں ایسے ہی جرائم کا ارتکاب کیا تھا۔

اس وقت سے آج تک اس طرح کی کئی مثالیں ملتی ہیں جو محض اتفاقیہ نہیں۔تیل، ہلاکتیں، ڈالر، ایران اور فوجی ہوائی اڈوں کی باتیں اب بھی کانوں کو مانوس لگتی ہیں۔پچاس برس بیت گئے لگتا ہے کچھ بھی نہیں بدلا۔

Source