Freedom of Expression – A Raincoat on a Rainy Day

544

By AHMAD JAWAD


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


“House of Cards” is a very famous Television Series which has a character of a woman journalist who is desperate to rise & get hold of a senior official in White House. Female Journalist suddenly becomes famous because of some breaking news she acquired through her contact at White House. The Give and take for such a relationship between female journalist & White House official rested on a  highly immoral & unethical grounds. This in fact is the truth of such a journalist who use every dirty trick in the game to bring about a breaking news to give oxygen to his career & success. At the same time, Such Government Official  use journalists to set his political scores. In Pakistan, a media House survives on the Government advertising budget & secret funds. Pakistan is also perhaps the only country which allows a media House to run Print & Electronic simultaneously which creates a monster of monopoly. Corrupt Governments needs such monsters to survive. So the monster grows with every challenge. ” Freedom of Expression” is a terminology which serves the purpose of a rain coat on a rainy day.

Cyrill is just one of the many tools in the hands of Government. He would appear as a devil’s advocate in a LUMS debate as a die hard admirer of democracy yet partnering with PMLN spokesmen. He would use his skills of debate & exploit his status of an alumni of LUMS to achieve one purpose that ” PM should not resign”. Cyrill is no different than the female journalist of ” House of Cards”. One serves White House, other serves PM House.Both are young, energetic, ambitious & ready to sell anything:virtue or value. Such journalist become role models for other young journalist who get desperate to find similar opportunity of selling themselves for a short cut. Buyer is like a hunter who is always there to select such ambitious & desperate candidates of short cut.

Such journalist sell their voice, their pen, their conscious & when it starts raining, they wear raincoat  of ” Freedom of Expression”. He sings & walks freely in a rain coat till rain stops. His next mission starts after every rain.We the poor & ignorant  nation all gather to sing the anthem of ” Freedom of Expression”.Do we have to stand up to support such journalist in rain coat on a rainy day. My dear nation, it’s not freedom of expression, it’s freedom of vested interest. We are just bad spectators. We are worse than the Romans clapping & watching gladiators killing each other at colosseum.


آزادی اظہار  ۔ بارش کے موسم کی برساتی

احمد جواد

ہاوس آف کارڈز ایک مشہور ٹی وی سیریز ہے جس کا ایک کردار ایک خاتون صحافی ہے جو ترقی پانے کے لئے وائٹ ہاوس کے ایک اہلکار کو رام کرنے کے لئے بے تاب ہے۔یہ خاتون صحافی وائٹ ہاوس میں اپنے روابط سے حاصل گئی بریکنگ نیوز کے حوالے سے اچانک مشہور ہو جاتی ہے۔خاتون صحافی اور وائٹ ہاوس اہلکار کے تعلقات غیر اخلاقی لین دین پر استوار ہیں۔درحقیقت اس طرح کے صحافی اپنی ملازمت بچانے اور ترقی پانے کی غرض سے بریکنگ نیوز حاصل کرنے کے لئے کوئی بھی نیچ حرکت کر سکتے ہیں۔حکومتی اہلکار بھی اپنے سیاسی عزائم کے حصول کے لئے صحافیوں کو استعمال کرتے ہیں۔پاکستان میں میڈیا ہاوس حکومت کے اشتہاری بجٹ اور خفیہ فنڈ پر پلتے ہیں۔پاکستان شائد واحد ملک ہے جس میں پرنٹ اور الیکٹرانک دونوں ذرائع ابلاغ  کی بہ یک وقت ملکیت کی اجازت ہے جس سے اجارہ داری کا عفریت جنم لیتا ہے۔بد عنوان حکومتوں کی بقا کے لئے اس طرح کے عفریتوں کی ضرورت رہتی ہے اور ان کو درپیش نت نئی آزمائشوں سے یہ عفریت پھلتے پھولتے ہیں۔آزادی اظہار وہ لبادہ ہے جو برسات میں برساتی کے طور پر استعمال ہوتا ہے۔

سیرل بھی  بہت سے حکومتی آلہ کاروں میں سے ایک ہے۔ وہ  LUMSکے  مباحثے میں جموریت کا متوالا بن کر حزب مخالف کی وکالت کرتا ہے تاہم وہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے ترجمان کا ساتھ بھی دیتا ہے۔ LUMSسے فارغ التحصیل ہونے اوراپنی تقریری مہارت  سے اپنا مقصد پورا کرنے کے لئے وہ تجویز کرتا ہے کہ وزیر اعظم کو مستعفی نہیں ہونا چاہئے۔سیرل ہاوس آف کارڈز کی خاتون صحافی سے مختلف  تونہیں۔ایک وائٹ ہاوس کی خدمت گزاری کرتی ہے دوسرا ایوان وزیر اعظم کی۔دونوں جوان  توانا اور کچھ بھی اچھا یابُرا بیچ دینے  پر تُلے بیٹھے ہیں۔اس طرح کے صحافی ان نوجوان صحافیوں کے آئیڈیل ہوتے ہیں جواپنی قیمت لگوانے کے آسان راستوں سے ملنے والے مواقع کی تلاش  میں بے تاب ہوتے ہی۔ شکاری کی طرح خریدار بھی ایسے ہی غرض مند،  جلد باز اور آسان راستوں کے متلاشی امیدواروں کا انتخاب کرتے ہیں۔

اس طرح کے صحافی اپنی آواز، اپنا قلم اور اپنا ضمیرتک فروخت کر دیتے ہیں اور جوں ہی زد میں آتے ہیں تو بارش میں برساتی کی طرح آزادی اظہار کا لبادہ اوڑھ لیتے ہیں اور گرفت نرم پڑنے پر بڑی آسانی سے سیٹیاں بجاتے بچ کر نکل جاتے ہیں۔ہر مشکل کے بعد ان کا نیا مشن شروع ہو جاتا ہے اور ہماری غریب اور کم علم قوم بیٹھ کر آزادی اظہار کا راگ الاپنے لگتی ہے۔کیا  احتساب  کےوقت ہمیں آزادی اظہار می کے پردے میں چھپے ان صحافیوں کا ساتھ دینا چاہئے؟پیارے ہم وطنو!  یہ اظہار کی آزادی نہیں یہ ذاتی مفادات کے حصول کی آزادی ہے۔ہم تو محض تماشائی ہیں ان رومنوں سے بھی گئے گزرے جو موت کے  اکھاڑے میں گلیڈی ایٹرز کے ایک دوسرے کے وار دیکھ کر  تالیاں بجاتے تھے۔     

Facebook Comments