From Pakistan to Sharifistan. We must not build “Show Rooms”for few, we must build “Living Rooms” for all.

1165

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


General Zia Ul Haq created Jihad to defeat Soviet Union & to please USA. Soviet Union is long gone, Russia has recovered to become a strong player in World’s economics & politics. USA has enjoyed the fruits of status of solo super power for two decades now. Zia Ul Haq goes down in history with no legacy & no followers.

Zia Ul Haq created Nawaz Sharif in Punjab. Nawaz Sharif & his family is now ruling Punjab for two decades & gave many colours to Punjab, Yellow colour to Taxis, Red Colour to Metro, Orange colour to Trains, yet nothing to the colourless life of 90% population of Punjab. If you don’t believe, make a journey from South of Punjab to Lahore. it’s a journey of poor or even absence of basic health facilities throughout the journey. People with critical health conditions or critically injured travel either to Multan or Lahore for treatment as all specialist hospitals are located either in Multan or Lahore. Taking critical patients from a village to such destination is another challenge. Broken roads, traffic jams,absence of ambulance, absence of first aid, harsh weather  & unsuitable transport all leave little chance of survival for such a patient. With limited train coverage, entire public transport is saturating already on insufficient road network. Poor Intra City local transport allowed tremendous growth of motor cycles available on easy instalments. Result is a brigade of motorcycles whisking through roads with no training, regulation & safety measures. On an average, 7 out of 10 motor cyclist meet accident with minor or major injuries. Poor motorcyclist is found innovating to ride 4 to 5 family members including children on one motor cycle. Nobody wears helmet, no back mirrors, no motor cycle lanes is a scenario of no less than a suicidal squad on roads.

Schools are run with children sitting on floors, no fans, no water, no teachers or a teacher with no will or no skill to teach anything.

Clean drinking water is not even a need.

Sewerage system is either open to sky or non existent.

Electricity is a luxury of few hours.

Gas lines can reach Murree by cutting mountains but cannot  reach flat lands of poor.

In the evening travel on Multan Road & try to reach Lahore, with traffic jammed at toll plazas & other junctions, look around & see ambulances making sirens of emergency to the deaf ears of traffic & Highway authorities. Entering Lahore from Multan Road is more than a nightmare.

Go to old localities of Lahore like Krishen Nagar, Chuberji, Sanda, Sant Nagar, Bhatti, Lohari & it appears you are in Stone Age. Come to Canal road, Jail Road, Mall road, you will feel like in a modern city.

Such contrasts of South Punjab & Lahore, old Lahore & new Lahore, Islamabad & Rawalpindi, Metro lane & parallel lanes of traffic jams are the contrast of Sharifistan.

61 Billion $ loan in 3 years with such contrasts & topping charts of Panama Leaks is just a story which has yet to see its end. An end of Pakistan or an end of Sharifistan? A story of Pakistan or a story of Sharifistan?

We must not build “Show Rooms”for few, we must build “Living Rooms” for all.


پاکستان سے شریفستان تک

احمد جواد

 امریکہ کو خوش کرنے اور سوویت یونین کو شکست دینے کے لئے ضیاالحق نے جہاد کا نعرہ لگایا .سوویت یونین کو ختم ہوئے زمانہ بیت  گیا اور روس معاشی و سیاسی میدان میں مضبوط کھلاڑی  بننے کے لئے سنبھل چکا ہے۔گذشتہ دو دہائیوں میں امریکہ دنیا کی واحد سُپر پاور ہونے کے مزے لوٹ رہا ہے۔تاریخ میں دفن ضیاٗالحق کے نہ وارث باقی بچے  ہیں نہ پیروگار۔

ضیاٗالحق نے پنجاب کے لئے نواز شریف کو دریافت کیا۔بیس سال سے حکومت کرنے والے نواز شریف اور ان کے خاندان نے پنجاب کو کئی رنگ بخشے۔ٹیکسی کو پیلا رنگ، میٹرو بس کو سرخ رنگ اور ٹرین کو اورنج رنگ مگر پنجاب کے 90%لوگوں کی بے رنگ زندگی میں کوئی رنگ نہ بھر سکے۔اگر یقین نہ ہو تو جنوبی پنجاب سے لاہور کی طرف سفر کر کے دیکھیں۔ غریب بستیوں کے اس پورے سفر میں آپ کو صحت کی بنیادی سہولتوں سے  بھی محروم لوگ نظر آئیں گے۔انتہائی بیمار اور شدید زخمی افراد کو لاہور اور ملتان  جانا پڑتا ہے کیوں کہ طبّی ماہرین وہیں پائے جاتے ہیں ۔دیہات سے شدیدمریضوں کو ان شہروں تک لے جانا معرکے سے کم نہیں۔سخت موسم، ابتدائی طبی امداد کی عدم فراہمی، ایمبولینس کی عدم دستیابی اور نامناسب گاڑیوں میں خستہ حال سڑکوں اور ٹریفک کے ہجوم میں سے گذرتے ہوئے قریب المرگ مریضوں کا بچنا نا ممکن ہو جاتا ہے۔ریل کی کم علاقوں  تک رسائی کی وجہ سے ناکافی سڑکوں پر لوکل ٹرانسپورٹ کا ہجوم امڈ آیا ہے۔خستہ حال مقامی سفری سواریوں  اورقسطوں پر کی فراہمی  کی وجہ سے موٹر سائیکل سواروں کی تعداد میں بہت اضافہ ہوا ہے جس کے نتیجے میں حفاظتی تدابیر کے بغیر قانونی ضابطوں کا منہ چڑاتے تربیت سے عاری موٹر سائیکل سواروں کی فوج فراٹے بھرتی نظر آتی ہے۔ہر دس میں سے اندازاًسات موٹر سائیکل سواروں کو حادثات میں معمولی اور شدید ضربات لگ جاتی ہیں۔ غریب گھرانوں کے لوگ چار پانچ افراد کو بچوں سمیت موٹر سائیکل پر سوار کر لیتے ہیں۔بغیر ہیلمٹ سواری کرنے، پیچھے دیکھنے والے آئینوں کے بغیر، سڑکوں پر خصوصی ٹریک نہ ہونے اورہیلمٹ پہنے بغیر موٹر سائیکل پر سواری کرنا خود کشی سے کم نہیں۔

 پنکھوں کے بغیر چلنے والے سکولوں میں بچے فرش پر بیٹھے ہوتے ہیں۔ نہ ان کو پانی دستیاب ہوتا ہے نہ استاد۔استاد ہیں تو تدریسی مہارت سے عاری۔

صاف پانی کی فراہمی کی تو جیسے ضرورت محسوس نہیں کی جاتی۔

کھلے عام بہتےگندے پانی کی نکاسی کا نظام جو کہیں سرے سے موجود نہیں۔

چند گھنٹوں کے لئے بجلی کی دستیابی کی موجیں

پہاڑوں کو کاٹ کر مری میں تو قدرتی گیس پہنچا دی جاتی ہے مگر غریبوں کےہموار علاقوں تک نہیں جا تی۔

شام کے وقت ملتان روڈ سے لاہور داخل ہوں تو ٹول پلازوں اور چوکوں پر ٹریفک میں پھنسی ایمبولینسوں کے چیختے چنگاڑتے سائرن ہائی وے او ر ٹریفک حکام کی توجہ کے طالب ہوتے ہیں۔ملتان روڈ سے لاہور داخل ہونا کسی ڈراوٗنےخواب سے کم نہیں۔

لاہور کے قدیم علاقوں کرشن نگر، چوبرجی، ساندہ، سنت نگر، بھاٹی لوہاری جائیں تو محسوس ہو گا جیسے پتھر کے زمانے میں آنکلے ہوں۔نہر کنارے جا نکلیں یا جیل روڈ اور مال روڈ جانا ہو تو جدید شہر کا احساس ہو تا ہے۔

جنوبی پنجاب اور لاہور، قدیم لاہور اور جدید لاہور، اسلام آباد اور راولپنڈی، میٹرو کی سڑک اور اس کی بغل میں پر ہجوم سڑکوں کا فرق شریفستان کے تضادات ہیں۔

تین سال میں 61ارب ڈالر قرض اور پانامہ لیکس میں سر فہرست  ہونے کا قصہ تمام ہوناہے۔شریفستان کا خاتمہ یا پاکستان کا خاتمہ۔پاکستان کا قصہ پاک یا شریفستان کا  کام تمام ۔ہمیں چند لوگوں  کے لئے شوروم کمرے بنانے کی بجائے تمام آبادی کو یکساں سہولیات مہیا کرنی چاہئیں

Facebook Comments