Game Changer Financial Solution better than CPEC, IMF, World Bank, US and KSA Aid.

384

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”
________________________________________________________________________

Game Changer Financial Solution better than CPEC, IMF, World Bank, US and KSA Aid.
By Ahmad Jawad
We are a nation hoping to grow through CPEC with an approximate loan of 40 Billion$ from China or 10 Billion$ IMF loan, we get excited on first sign of Saudi Investment, we look forward to have release of US aid, we seek help from overseas Pakistanis every day. Last 10 years under Zardari and Sharifs have left us in most vulnerable economic state.
In all this hope of foreign aid, we might have forgotten our own responsibility and duty: responsibility as a nation, responsibility as a government, duty as a Minister and responsibility as a public representative. This kind of mindset is actually not our national mindset but it has been transpired by following powerhouses during each tenure of governments in last 48 years. These faces join every government as experts and under essential machinery of bureaucracy: who are they? They come from following three categories:
1. Our bureaucracy, the mother of status quo.
2. Our foreign funded think tanks, who takes birth in theories and die in theories.
3.Our economic experts who never created a single profit earning entity in their lives but they want to guide a country how to earn money
These three categories have invented, planned and executed our economic policies in last 48 years. They are the ones who have put us into current mess. They could never conceive a policy that can allow us to walk without crutches.
I am a simple Pakistani, I am not bureaucrat, i am not so called economic expert, i am not foreign funded think tank, I am not MNA/MPA/Senator or a Minister, I am not qualified from Harvard or Oxford, I am not Phd, yet i would like to place a solution here which can give better results than the dreams of CPEC, IMF loan, US aid or Saudi Investment or loans.
Before I offer a solution, I would like to ask a few questions:
Can we safely assume that wealthy club of Pakistan comprises of 2% population of Pakistan (4 Million). This group has Feudal lords, Landlords, Industrialist, most of the serving and retired Generals and other senior ranks of Defense Arms, most of the serving and retired bureaucrats, most of the serving and retired Judges, Top positions of public sectors, Businessmen, Top journalists, Anchors, most of the Parliamentarians, most of the politicians, most of the doctors, most of the engineers, most of the corporate leaders and most of the Pirs & religious leaders?
Can we safely assume that each of this wealthy group has a property (Plot, house, agriculture land, business, factory, ware houses, farm house) over 5 crore (50 Million) at market rate?
Can we safely assume that each of this group has a Car/SUV 1600 Cc & above and having more than two cars?
Can we assume each of this group has more than two servants in their houses?
Can we assume each of this group has a reasonable bank balance and regular income through various sources that makes their life comfortable enough?
Can we assume each of this group has been able to provide education to their children in expensive private schools or exclusive schools or even education abroad?
Can we assume each of this group has air conditioners, LEDs, laptops, iPhones, Samsungs phones, expensive furniture, kitchens and luxury drawing rooms in their houses?
Can we assume each of this group has visited abroad for vacations abroad more than three times? Even if the vacations were connected to official visits.
Can we assume each of this group get their medical treatment from most expensive hospitals of Pakistan or abroad?
This 2% of elite club has nothing to fear if dollar goes up or down, inflation rises, loans increase or shortage of electricity or water, they comfortably manage their lifestyle through their own deep pocket or government perks and privileges.
Can we assume that almost 50 % of this group is corrupt? Can we assume that almost 50 % of this group has made money using their power & authority in government positions? do they deserve any sympathy? I have a solution to make them & Elite club of Pakistan to pay back for Pakistan.
SOLUTION:
A notification from FBR should be issued under the approval of government that these 4 Million elite club will pay  “ONE TIME” 1% LIFESTYLE TAX of their total wealth to support the ailing economy of country.
STEP 1:
Measure their wealth. Wealth will not be measured only through tax returns but it will be measured through number of houses, plots, cars registered on their name or any member of their family. All this data can be taken from DHA, Bahria Towns, Other housing schemes, expensive residential sectors of every city and vehicle registration database. It will also be measured through registration of children in expensive private schools, it will be measured through foreign trips abroad from FIA, it will be measured through patwaris system to know agriculture lands held by landlords. This all data can be retrieved and collected within 30 days.
STEP 2:
Set a date for volunteer submission of Lifestyle Tax within 30 days according to FBR notification at a rate of 1% of total wealth. Such volunteer submission of Lifestyle Tax can be granted some privileges by the government to inspire them and acknowledge their contribution.
STEP 3:
Those who have not availed the opportunity of volunteer payment of Lifestyle Tax should be dealt with a crackdown based on database collected on the indicators of their wealth. The crackdown should collect 5% Lifestyle Tax out of such list of hidden elite club who are visible to whole country but invisible to FBR.
If we average out entire wealth of each member of elite club as worth of  Rs 100 Million (10 Crore), which is still a very pessimistic estimate, government will be collecting Rs 1 Million from every member of 4 million members club as one time Lifestyle Tax.
CAN YOU IMAGINE WHAT GOVERNMENT WILL BE COLLECTING OUT OF ONE TIME LIFESTYLE TAX FROM ELITE CLUB OF PAKISTAN?
IT IS 4000 BILLION OF RUPEES. IT WILL BE 30 BILLION DOLLAR. IS IT NOT BIGGER THAN CPEC, IMF, WORLD BANK AND US AID AND KSA AID?
This solution is not loan.
This solution is not a burden on 98% population of Pakistan.
This solution does not need years to collect but it can be collected in 3 months.
This solution might raise some screams out of pain by only 2 % elite club of Pakistan but these screams are nothing compared to dying children of THAR or 45 % under nutrition children of Pakistan.
Since this solution is without any help from actual government statistics or database so an error up to 20 % might be expected. However, even with 20 % error, the solution will fetch nearly 24 billion dollar in three months.
I don’t see much challenge to execute this solution except government’s will and competence of team leading such solution.
A task force of some outstanding and honest members from FBR, FIA, NAB, NADRA, Army, MPAs, MNAs, Senators, Navy, Air Force, Police, State Bank, ISI, IB and retired judges & bureaucrats can accomplish this task if they all believe in themselves and also ready to sacrifice a small portion of their wealth since each member is also expected to qualify for 1% LIFESTYLE Tax.
Nations change not by status quo, nations change by out of box solutions. Out of box solution will never come from status quo.
Our bureaucracy is mother of status quo. Government must choose some dynamic, honest, competent and sincere bureaucrats and sky is the limit. We need to stay away from so called economist and so-called experts who have only mastered in creating theories which never succeeded in real life. This is how they run their shops and sell their toothpaste (Manjin).
ONE TIME 1 % LIFESTYLE TAX CAN BE A SUCCESS STORY AND STARTING POINT OF CHANGE IN PAKISTAN AND FIRST STEP TOWARDS SELF RELIANCE.
______________________________________________________________
سی پیک ،آئی ایم ایف،ورلڈبینک، امریکی ‘سعودی امداد  اور قرضوں سے بڑھ کرایسا مالی حل جو کایا پلٹ سکتا ہے
احمد جواد
ہم وہ قوم ہیں جو  چین سے سی پیک کی مد میں حاصل والے 40ارب ڈالر پر پلنے کی توقع لگائے بیٹھے ہیں یا آئی ایم ایف سے 10ارب ڈالر کا قرضہ ملنے کی آس میں مبتلا ہیں۔ ہم سعودی سرمایہ کاری کی جھلک پر جذباتی ہو جاتے ہیں یا ہم  نےامریکی امداد کی بحالی پر نگاہیں مرکوز کر رکھی ہیں۔ ہم ہر روز بیرون ملک مقیم پاکستانیوں سے مدد مانگتے ہیں۔پچھلے دس  سالوں میں زرداری اور شریف برادران نے ہماری معیشت کی جڑوں کو کھوکھلا کرکے رکھ دیا ہے۔
بیرونی  امداد کی تمام تر امیدوں میں ہم نے اپنے فرائض اور ذمہ داریوں کو فراموش کر دیا ہے جن میں بطور قوم ذمہ داری،  بطورحکومت ذمہ داری،  بطور وزیر ذمہ داری اور بطور عوامی نمائندہ ذمہ داری شامل ہیں۔ ہماری یہ سوچ دراصل بحیثیت مجموعی ہماری قومی سوچ نہیں بلکہ گذشتہ 48برسوں کے دوران وجود میں آنے والی حکومتوں کےبقراطوں سے یہ سوچ پھوٹتی چلی آرہی ہے۔یہی وہ چہرے ہیں جو ہر حکومت میں بطور ماہرین شامل واجہ ہوتے ہیں اور نوکر شاہی کی مشینری کا اہم جزور بنے رہتے ہیں۔یہ کون لوگ ہیں؟ یہ لوگ تین طرح سے ظہور میں آتے ہیں۔
1. ہماری افسر شاہی جو سٹیٹس کو کی ماں ہے۔
2. بیرونی امداد پر پلنے والے ہمارے تھنک ٹینک جو اول آخرنظریات  میں جیتے اور نظریات میں  مرتے رہتے ہیں۔
3. ہمارے معاشی ماہرین جواپنے جیتے جی کوئی منافع بخش ادارہ وجود میں نہیں لائے مگر وہ ملک کی کمائی بڑھانے  کی راہنمائی کرنے پر بضد رہتے ہیں۔
یہی تین قسم کے لوگ ہیں جنہوں نے پچھلے 48برسوں میں معاشی پالیسیاں  بنائی ہیں اور ان پر عمل درآمد کرایا ہے۔ یہی وہ لوگ ہیں جنہوں نے بربادی کو ہمارے گھر کا راستہ دکھایا ہے۔انہوں نے کبھی ایسی پالیسی کے بارے نہیں سوچا جو ہمیں بیساکھیوں کی مدد کے بغیر چلنے کی ترغیب دے۔
میں ایک سیدھا سادا پاکستانی ہوں۔ نہ میں کوئی بیوروکریٹ ہوں، نہ میں بیرونی امداد پر چلنے والےکسی تھنک ٹینک کا حصہ ہوں، نہ میں کوئی ایم این اے، ایم پی اے ،سینیٹر یا کوئی وزیر ہوں۔نہ میں ہاورڈ  یا آکسفورڈ سے تعلیمیافتہ ہوں ، نہ ہی میں نے پی ایچ ڈی کر رکھی ہے۔ پھر بھی میں ایک ایسا معاشی حل پیش کرنے کی جسارت کر رہا ہوں جو سی پیک کے سپنوں، آئی ایم ایف کے  قرضے، امریکی امداد ، سعودی سرمایہ کاری یا قرضوں سے بہتر نتائج کا پیش خیمہ ہو سکتا ہے۔
اپنا حل پیش کرنے سے  پہلے میں چند سوالات گوش گذار کرنا چاہتا ہوں:
کیا ہم نے کبھی پاکستان کے طبقہ امراء کے بارے با آسانی سوچا ہے جوپاکستان کی آبادی کا صرف دو فیصد یعنی 40لاکھ نفوس پر مشتمل ہے جس میں جاگیر دار، زمیندار، صنعت کار، بہت سے سابق اور حاضر سروس جرنیل اور افواج کےسینئر  عہدوں کے افسران، بہت سے سابقہ اور برسر ملازمت سول سروس افسران، بہت سے ریٹائرڈ اور حاضر سروس جج صاحبان، اعلیٰ سرکاری عہدوں پر فائز افسران،  کاروباری افراد، چوٹی کے صحافی اور اینکر حضرات، بہت سے اراکین اسمبلی، بہت سے سیاستدان، بہت سے ڈاکٹر، انجنیئر، کاروباری اداروں کے عہدیداروں کے علاوہ بہت سے پیر اور مذہبی رہنما شامل ہیں؟
ہمارے اندازے کے مطابق ان میں سے ہر فردموجودہ مارکیٹ نرخوں کے مطابق پانچ کروڑ روپے کی مالیت کے اثاثوں کا مالک ہےجن میں پلاٹ، مکان، زرعی اراضی، کاروبار، کارخانہ، گودام اور فارم ہاؤس شامل ہیں؟
ہم  فرض کر سکتے ہیں  ان میں سے ہر گروپ نے 1600سی سی یا اس سے بھی زیادہ طاقتور دو  یا اس سے  زیادہ تعداد میں کاریں اور لگژری  جیپیں رکھی ہوئی ہیں؟
 ہم آسانی سے فرض کر سکتے ہیں  ان میں سے ہر گروپ نے 1600سی سی یا اس سے بھی زیادہ طاقتور دو  یا اس سے  زیادہ تعداد میں کاریں اور لگژری  جیپیں رکھی ہوئی ہیں؟
محتاط اندازے کے مطابق ان کے گھروں میں دو سے زیادہ گھریلوں ملازمین کام کرتے ہیں؟
 ہمارے اندازے کے مطابق اس طبقہ کے افراد کے بینک اکاؤنٹ میں وافر سرمایہ جمع ہے اور ان کو دیگر ذرائع سے متواتر کمائی آتی رہتی ہے جس کی بدولت وہ آرام دہ زندگی کے مزے لیتے رہتے ہیں؟
ممکن ہے کہ یہ طبقہ اپنے بچوں کو مہنگے پرائیویٹ سکولوں، ممتاز تعلیمی اداروں حتیٰ کہ بیرون ملک تعلیم دلوا سکتا ہے؟
یہ مان لینے میں کیا قباحت ہے کہ ان میں سے ہر طبقہ  کے پر تعیش ڈرائنگ روم اورخواب گاہیں ائر کنڈیشن، ایل ای ڈی ٹیلیویژن، جدید ترین آئی فون اور سیم سانگ فون، قیمتی فرنیچر اور کچن سے مزیّن ہیں؟
کیا مضائقہ ہے اگر تسلیم کر لیا جائے کہ ہر طبقہ تین تین بار چھٹیاں گذارنے کے لئے بیرون ملک جاچکا ہے؟ کبھی کبھی  تو یہ چھٹیاں سرکاری دوروں سے جڑی ہوتی ہیں۔
ہم فرض کر لیں کہ ان میں سے ہر طبقہ اپنا علاج معالجہ بیرون ملک یا پاکستان کے مہنگے ترین ہسپتالوں سے کرواتا ہے؟
اس 2%طبقہ اشرافیہ کو فکر نہیں اگرڈالر کی  قدربڑھتی ہے یا  کم ہوتی ہے، اگر مہنگائی میں اضافہ ہوتا ہے، اگرواجب الادا قرضوں میں اضافہ ہوتا ہے، اگر بجلی یا پانی کی فراہمی میں کمی ہوتی ہے؟  وہ تو جیب میں موجود بھاری رقم یا سرکاری طور پر ملنے والی مراعات کے باعث اپنے لائف سٹائل کے مزے لیتے رہتے ہیں۔
ہم  فرض کرلیں کہ اس طبقے کے 50%افراد کرپٹ ہیں؟ کیا یہ درست نہیں کہ ان 50%لوگوں نے اپنی دولت سرکاری حیثیت، اختیار اور طاقت کے بل بوتے پر کمائی ہے؟کیا وہ کسی ہمدردی کے مستحق ہیں؟ میں یہ حل پیش کر رہا ہوں کہ پاکستان کے اس طبقہ اشرافیہ سے یہ پیسہ واپس لیا جائے۔
حل:
حکومت کی منظوری کے بعد ایف بی آر یہ حکم نامہ جاری کرے جس کے مطابق ملک کی معیشت کی بہتری کے لئے 40لاکھ افراد پر مشتمل طبقہ اشرافیہ اپنی تمام تر دولت پر زندگی میں ایک مرتبہ لاگو1%لائف سٹائل ٹیکس ادا کرے۔
پہلا قدم:
یہ لوگ اپنی دولت کا تخمینہ لگائیں۔ یہ تخمینہ جمع کرائی گئی ٹیکس ریٹرن کی بنیاد پر نہیں بلکہ ان کے اپنے نام اور ان کے  اہل وعیال کے نام گھروں، پلاٹوں،  ان کے نام پررجسٹرڈکاروں کی بنیاد پر ہونا چاہئے۔یہ تمام اعداد و شمار ڈی ایچ اے، بحریہ ٹاؤن، دوسری ہاؤسنگ سکیموں، ہر شہر کے مہنگے ترین رہائشی سیکٹروں اور گاڑیوں کی رجسٹریشن کے دفاتر سے لئے جائیں۔اس تخمینے میں مہنگے تعلیمی اداروں میں زیرتعلیم بچوں  کے اخراجات بھی شامل ہوں اور بیرون ملک دورے بھی اس تخمینے میں موجود ہوں جن کا مواد ایف آئی اے سے حاصل کیا جائے۔دولت کے اندازے میں زمیندار کے ملکیتی رقبے کی تصدیق پٹواری سے کرائی جائے۔یہ سب اعداد و شمار 30دن میں حاصل کرکے محفوظ کر لئے جائیں۔
دوسرا قدم:
ایف بی آر کے حکمنامے میں ایک مقررہ تاریخ کا تعیّن کر لیا جائے جس کے مطابق کل دولت پر 1%لائف سٹائل ٹیکس جمع کرایا جا سکے۔ رضاکارانہ طور پر لائف سٹائل ٹیکس جمع کرانے والوں کی تحسین کرنے اور  ان کو اس جانب راغب کرنے کے لئے اس ٹیکس کے ساتھ کچھ مراعات بھی پیش کی جائیں۔
تیسرا قدم:
جو لوگ رضاکارانہ سہولت سے فائدہ اٹھانے سے منکر ہوں ان کے اثاثوں کے حاصل کئے گئے اعداد و شمار کے مطابق ان کی جائدادوں پر چھاپے مارے جائیں ۔ جو اثاثے اب تک طبقہ اشرافیہ نے ایف بی آر سے چھپا کر رکھے تھے  مگر یہ بظاہر سب کو نظر آرہے تھے  ان پر 5%کے حساب سے لائف سٹائل ٹیکس وصول کیا جائے۔
اگر ہم اشرافیہ کے ہر فرد کی دولت کا اوسطاً اندازہ لگائیں تو وہ محدود اندازے کے مطابق 10کروڑ روپے فی کس بنتی ہے جس پر حکومت طبقہ اشرافیہ کے40لاکھ افراد میں سےہر مالدار سے 10لاکھ روپے لائف سٹائل ٹیکس وصول کرے گی۔
کیا آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ حکومت پاکستان کے طبقہ اشرافیہ سے ایک ہلے میں کتنا لائف سٹائل ٹیکس وصول کر سکے گی؟
جی ہاں اس رقم کی مالیت 4000ارب روپے ہوگی ۔یہ رقم ڈالروں میں شمار کریں تو 30ارب ڈالر بنتی ہے۔ کیا یہ رقم سی پیک، آئی ایم  ایف، ورلڈ بینک، امریکی یا سعودی امداد سے زیادہ نہ ہوگی؟
یہ مجوزہ رقم کوئی قرض نہیں۔
اس مجوزہ ٹیکس کا بوجھ پاکستان کی 98%آبادی پر بالکل نہیں پڑے گا۔
اس مجوزہ ٹیکس کی وصولی کے لئے کئی برس انتظار نہیں کرنا پڑے گا بلکہ یہ صرف تین ماہ میں وصول کر لیا جائے گا۔
اس مجوزہ ٹیکس سے پاکستان کے دو فیصد اشرافیہ طبقے کی کچھ دردبھری چیخیں بلند ہوں گی مگر یہ چیخ چنگھاڑ تھر میں مرنے والے بچوں یا پاکستان کے غذائی قلت کاشکارہونے والے بچوں کے مقابلے میں کچھ بھی نہیں ہوگی۔
یہ مجوزہ حل دراصل حکومتی اعداد و شمار اور ریکارڈکے بغیر تجویز کیا گیا ہے اس لئے اس میں 20% غلطی کی گنجائش ہے۔ تاہم اگر بیس فیصد غلطی کا احتمال ہو تب بھی اس مجوزہ حل سے تین ماہ میں 24ارب ڈالر حاصل کئے جا سکتے ہیں۔
مجھے اس مجوزہ حل پر عمل درآمد میں حکومتی عزم کی قلت اور اس کام پر مامور ٹیم کی اہلیت پر سوالیہ نشان کے علاوہ کوئی سقم نظر نہیں آتا۔
باہمی دلچسپی کے ساتھ ساتھ ایف بی آر،  ایف آئی اے، نیب،  نادرا،  فوج،  صوبائی اسمبلیوں کے ممبران، قومی اسمبلی کےممبران، سینیٹر حضرات ، نیوی،  ایئر فورس،  پولیس،  سٹیٹ بینک،  آئی ایس آئی،  آئی بی ،  عدلیہ کے ریٹائرڈ ججوں اور سول سروس کے ریٹائرڈ افسران پر مشتمل  افراد کی ٹاسک فورس  یہ کام مکمل کر سکتی ہے۔یہ کام تب ہی ہو سکتا ہے اگر ان کو اپنی اہلیت کا یقین ہو اور وہ اپنی دولت کا ایک قلیل حصہ ملک کی خاطرقربان کریں کیونکہ اس ٹاسک فورس کےہر ممبر پر اس مجوزہ 1%لائف سٹائل ٹیکس کا اطلاق ہوگا۔
قوموں کے اندر انقلاب سٹیٹس کو سے نہیں آیا کرتے بلکہ غیر روائتی سوچیں انقلاب کا باعث بنتی ہیں۔ سٹیٹس کو کے بطن سے جدت آمیز  حل برآمد نہیں ہوتے۔
ہماری افسر شاہی سٹیٹس کو کی ماں ہے۔ حکومت کو چاہئے کہ اس مقصد کے لئے کچھ فعال، ایماندار، مخلص اور اہلیت سے بھرپور افسران کا انتخاب کرے اور پھر چل سو چل۔ ہمیں چاہئے کہ نام نہاد معیشت دانوں اور ان خود ساختہ ماہرین سے دامن بچا کر رکھیں جو تھیوریاں گھڑنے کے ماہر تو ہیں مگر انہوں نے زندگی میں کبھی کامیابی کی شکل نہیں دیکھی۔ انہوں نے دکانداری لگا رکھی ہے جس پر اپنا منجن بیچتے پھرتے ہیں۔
صرف ایک دفعہ لائف سٹائل ٹیکس کی وصولی کامیابی کی داستان  بن سکتی ہےجو پاکستان میں خود انحصاری کی منزل کی جانب پہلاانقلاب آفرین قدم ہوگا۔
Facebook Comments