Losing Vision to see the Difference between Black and White by a Nation

484

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


 

Our representatives in Parliament whom we consider working under a system or a democracy, they are carrying out surgical strikes every day in the half dead, half alive body of Pakistan. Indian Surgical is fake or real but surgical Strikes by two families under the name of democracy are Lethal & consistent. Every surgical strike by our democratic representatives cost us killing of humanity, creation of hunger n poverty, loss of justice & merit, loss of billions every day, loss of truth & spread of lies. I wonder Pakistan’s problem is Imran Khan or those two families who shared 40 years of rule. Those who could double the loans of entire history of Pakistan in just 8 years. Is it simplicity or criminal ignorance or inability of a nation to see black n white. Even a colour blind can see the difference between black n white, are we worse than colour blind, have we completely lost our far & near sightedness? We must all go through eye testing for our own safety. At least Imran Khan can see the difference between black n white. He not only see the difference, he helps nation to see the difference & strives to challenge the difference.

After 8 to 10 versions of explanation by PM & his family & friends recorded publicly over their flats  & billions of dollars money laundering , yet nation wonders innocently ” Is it a good time to launch a movement against Corruption”.

Thanks to Imran Khan that nation can even talk about corruption or bad governance; without him, we must have been watching friendly opposition walking in & out of Parliament over their internal & personal deals.

Nation’s are not destroyed by a ruler or a system or a hostile invader, nations get destroyed when they get blind to see the difference between black n white.


قوم کا سیاہ اور سفید میں تمیز کرنے کی صلاحیت کا فقدان 

احمد جواد

ہمارے منتخب نمائندے جنہیں ہم سمجھتے ہیں کہ وہ ایک جمہوری نظام کے تحت کام کر رہے ہیں وہ روزانہ پاکستان کے نیم  جان جسم پر سرجیکل سٹرائیک کرتے رہتے ہیں۔بھارتی سرجیکل سٹرائیکس تومعلوم نہیں اصلی ہیں یا نقلی مگرجمہوریت کے نام پر کی جانے والی دو خاندانوں کی سرجیکل سٹرائیکس نہ صرف تابڑ توڑ ہیں بلکہ انتہائی مہلک بھی۔جمہوری نمائندوں کے ہر حملّے کی قیمت قوم کو انسانی جانوں کے ضیاع، بھوک اور افلاس میں اضافے، انصاف اور میرٹ کے خاتمے، اربوں روپے کے نقصان، سچ کے فقدان اور جھوٹ کے فروغ کی شکل میں ادا کرنی پڑتی ہے۔محو حیرت ہوں کہ پاکستان کا مسئلہ عمران خان ہے یا پچھلے چالیس سال سے اقتدار کی باریاں لینے والے یہ دو خاندان جنہوں نےپاکستان کی تاریخ میں قرضوں کے بوجھ میں دوگنا اضافہ کر دیا ہے۔ اسے قوم کی سادگی کہیں، مجرمانہ غفلت یا سیاہ او ر سفید میں تمیز کرنے کی صلاحیت کا خاتمہ سمجھیں۔رنگوں کی پہچان سے عاری افراد بھی سیاہ اور سفید کی تمیز کر سکتے ہیں مگر ہم تو ان کور چشموں سے بھی گئے گذرے ہیں۔ اپنی سلامتی کے لئے ہمیں اپنی نظر کا معائنہ کرانے کی ضرورت ہے۔کم از کم عمران خان سیاہ اور سفید میں تمیز کر سکتا ہے۔ اسے نہ صرف یہ فرق معلوم ہے بلکہ وہ قوم کو بھی اس فرق سے آگاہ رکھتا ہے اور اس کے خلاف نبرد آزما ہے۔

وزیر اعظم، ان کے خاندان اور بہی خواہوں کی ان کےبیرون ملک فلیٹوں اور اربوں ڈالر کی منی لانڈرنگ پر متعدد  بودی وضاحتوں کے باوجود قوم معصومانہ حیرت سےسوچ رہی ہے کہ کیا کرپشن کے خلاف اٹھ کھڑے ہونے کا وقت آچکا ہے؟عمران کے دم قدم سے قوم  میں کرپشن اور بدترین حکمرانی زبان زد عام ہیں وگرنہ عمران کے بغیرہمیں فرینڈلی اپوزیشن کی ذاتی مفادات کے لئے پارلیمنٹ میں آنیاں جانیاں دیکھنے کو ملتیں۔

قومیں کسی حکمران، نظام یا بیرونی حملہ آوروں کی وجہ سے تباہ نہیں ہوتیں بلکہ وہ سیاہ و سفیدمیں فرق کرنے کی صلاحیت کھو دینے

کی وجہ سے مٹ جاتی ہیں۔

Facebook Comments