National Awakening-A Recipe

706

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


Premier Service was inaugurated by PM of Pakistan almost 6 months ago. It has already caused big losses to PIA. No Service whether ordinary or premier in any sector can achieve sustainability till basic governance model is not addressed. When institutional heads are appointed to serve the rulers’ interest, when accountability is non existent, when transparency is a far cry, when merit & competence is compromised, why we have to wait for results, outcome of such approach is predictable on day one but our rulers can complete their tenure through pomp n show through projects like Metro, Orange train, Benazir Income program, PIA premier Service, re carpeting of a good carpeted road of Rawal Road, Laptop program, Sasti Roti program, Danish School program, Yellow Cab scheme & many others, each of such schemes were never planned on good governance model rather to achieve short term political publicity. No wonders our debts increased three times in just 8-1/2 years of two family rule compared to 60 years of remaining rule.

I find it amazing when people are ready to accept such fiascos, yet praising or protecting leaders responsible for our destruction out of their sheer love or ego or some vested interest or mere ignorance or fear of victimisation. One reason out of these must be there. If each one of us start exploring which reason motivates us to follow such leaders, it will be first step towards finding a recipe of a national awakening.


 

قوم کی بیداردی کا نسخہ

احمد جواد

تقریباً چھ ماہ قبل پاکستان کے وزیراعظم نے پریمیئر سروس کا افتتاح کیا جو اب تک پی آئی اے کو بھاری نقصان پہنچا چکی ہے۔جب تک طرز حکمرانی کی اصلاح نہ کر لی جائے، کسی بھی شعبے میں معمولی یا پریمیئر سروس جاری نہیں رہ سکتی۔جب اداروں کے سربراہوں کو حکمرانوں کے مفاد کی نگہداشت کے لئے تعینات کیا جائے، جب احتساب معطل ہو جائے، جب شفافیت دیوانے کی بڑ لگنے لگے، جب قابلیت اور اہلیت کی دھجیاں بکھیر دی جائیں تو ہمیں نتائج کا انتظار کیوں رہتا ہے۔ایسے کاموں کا انجام تو روز اول سے معلوم ہوتا ہے۔ہمارے حاکم اپنا دوران عہد پورا کرنے  اور شان و شوکت کے اظہار کے لئے میٹرو، اورنج ٹرین، بینظیر انکم سکیم،پی آئی اے پریمیئر سروس، راول روڈ کی بھلی چنگی سڑک کو دوبارہ کارپٹ کرکے، لیپ ٹاپ کمپیوٹر پروگرام، سستی روٹی پروگرام، دانش سکول پروگرام اور ییلو کیب جیسی قلیل المدتی سیاسی شہرت حاصل کرنے والی وہ سکیمیں لاتے ہیں جو مثالی حکمرانی کے معیار پر پوری نہیں اترتیں۔کسی کو حیرت نہیں ہوتی کہ دو خاندانوں کے ساڑھے آٹھ سالہ دور میں بیرونی قرضہ گذشتہ ساٹھ سال میں حاصل کئے جانے والے قرض سے تین گنا ہو چکا ہے۔

مجھے حیرت ہوتی ہے جب لوگ ذلت آمیز ناکامیوں کو تسلیم کر لیتے ہیں پھر بھی اپنی شدید محبت، ہٹ دھرمی، ذاتی مفاد، لا علمی کی وجہ سے  حکمرانوں کا دفاع کرتے ہیں اور ان کے گن گاتے ہیں۔اس کی کوئی بھی وجہ ہو سکتی ہے۔اگر ہم میں سے ہر کوئی یہ جاننے کی کوشش کرے کہ آخر وہ کون سی وجہ ہے جو ہمیں ان رہنماوں کی پیروی کی ترغیب دیتی ہے تو یہ قوم کی بیداری کا حل تلاش کرنے کی جانب پہلا قدم ہوگا۔