Off Shore company is not question, What is the source of income & paid taxation is the question

1686
.

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


Today a pair of host in morning show on a major TV Channel asked a question ” Prof Khurshid has off shore company, what JI has to say”. In my humble opinion, it’s a wrong question for the simple reason that there is nothing illegal or nothing wrong about Off shore company, it’s source of income & paid tax on the income  which are questionable.

Majority of anchors follow the same line of question whenever the subject of Off Shore companies arise.

it’s strategy of PMLN to confuse the nation on the subject of off shore companies & Panama Leaks. Question to Nawaz Sharif is not “why you created off shore company” question is to provide evidence on source of income for off shore company/Assets & paid tax. Most of the media anchors either do not have requisite exposure or knowledge on such subjects or they don’t do their home work on a subject before opening mouth.

Result: whole nation is confused on off shore companies, adding another feather into the success of PMLN media cell for fooling nation.


 مسئلہ آف شور کمپنی کا نہیں بلکہ اس کے ذرائع آمدنی اور ادا شدہ ٹیکس قابل احتساب ہیں

احمد جواد

ایک بڑے ٹی وی چینل پر صبح کا پروگرام کرنے والے دو اینکروں نے سوال پوچھا کہ پروفیسر خورشید احمد کی آف شور کمپنی کے بارے جماعت اسلامی کیا کہتی ہے۔میری مودبانہ رائے کے مطابق اس کی سادہ سی وجہ یہ ہے کہ آف شور کمپنی رکھنے میں کوئی قباحت نہیں اور نہ یہ غیر قانونی ہے۔البتہ اس کے ذرائع آمدنی  اور ادا شدہ ٹیکسوں کے بارے پوچھا جا سکتا ہے۔

جب بھی آف شور کمپنیوں کا موضوع زیر بحث آتا ہے، زیادہ تر اینکر ایسے ہی سوالوں کا انتخاب کرتے ہیں۔

پاکستان مسلم لیگ (نواز) کی حکمت عملی بھی یہی ہے کہ پانامہ لیکس اور آف شور کمپنیوں کے بارے قوم کو گمراہ کیا جائے۔نواز شریف پر یہ اعتراض نہیں کہ آپ نے آف شور کمپنی کیوں بنائی بلکہ انہیں اس کمپنی کے ذرائع آمدنی، اثاثوں اور ان پر ادا کئے گئے ٹیکس کے ثبوت مہیا کرنے کے بارے پوچھا جائے۔بہت سے میڈیا اینکر مطلوبہ علم نہ ہونے کی وجہ سے اس طرح کے موضوعات پر دسترس نہیں رکھتے یا وہ بحث کرنے سے پہلے مطلوبہ موضوع پر پورا ہوم ورک نہیں کرتے۔

نتیجہ: آف شور کمپنیوں کے بارے پوری قوم تذبذب میں مبتلا ہے اور یہ قوم کو بیوقوف بنانے والےپاکستان مسلم لیگ (نواز) کے میڈیا سیل کی ایک اور کارستانی ہے