Political and apolitical. Politics and debate.Awareness & ignorance.

721
.

Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”


سیاسی اور غیر سیاسی

سیاست اور مباحثہ آگاہی اور لا علمی

احمد جواد

عرصہ دراز سے آج تک ہم میں بہت سے لوگوں کا یہ معمول بن چکا ہے کہ وہ بڑے فخر سے کہتے ہیں کہ ہماری کسی سیاسی جماعت سے وابستگی نہیں، ہم تو جی غیر سیاسی اورغیر جانبدار لوگ ہیں۔کسی سیاسی جماعت سے وابستہ نہ ہونےکا در اصل مطلب کیا ہوتا ہے؟میری نا چیز رائے میں کوئی کسی سیاسی جماعت کا ورکر ہو سکتا ہے، اُس کا لیڈر ہوسکتا ہے، ووٹر یا حامی ہو سکتا ہے۔ کسی کےغیر جانبدار ہونے کا مطلب یہ ہے کہ اُس شخص میں شناخت کرنے کی صلاحیت ہی نہیں یا وہ خود کو قدرے محفوظ اور زیادہ عقلمند سمجھتا ہے۔میں تو بڑی ایمانداری یہ سمجھتا ہوں اور اس پر یقین رکھتا ہوں کہ یہ ہماری جبلت اور وقت کی ضرورت ہے کہ ہمیں یہ فیصلہ کرنے کا حق حاصل ہو کہ ہماری قیادت کون کرے گا۔ہماری زندگی کے ہر پہلو کا یہ تقاضہ ہے کہ ہمیں اپنی  اور جمہور کی مرضی سے چنے گئے رہبر کی ضرورت پیش آتی ہے۔جب اپنے ملک کے معاملے میں بھی سوال اٹھتا ہے کہ ہماری قیادت کون کرے گا تو ہم غیر جانبدار یا تماشائی بن جاتے ہیں۔کوئی بھی میرے خیال کی تردید کر سکتا ہے مگر میں سمجھتا ہوں کہ غیر جانبداری جانوروں جیسا روّیہ ہےکیونکہ جانوروں کے پاس نہ چناؤ کا حق ہوتا ہے نہ لیڈر چننے کے لئے برے بھلے کے امتیاز کا حق ہوتا ہے۔جانور تو بس ریوڑ کا اس وقت تک حصہ ہوتے ہیں جب تک کوئی طاقتور انہیں کھا نہ جائے۔جانورو ں کی تو جبلت بھی نہیں بدلتی جبکہ انسان کئی تہذیبوں سے گذر کر سیانا ہو چکا ہے۔

تمام تعلیمیافتہ لوگوں کو اپنے لئے اور آنے والی نسلوں کےلئے سوچنے سمجھنے، بحث مباحثہ کرنے اور حکمرانوں کے انتخاب کا حق استعمال کرنا چاہئے۔اگر ہم اپنا یہ حق استعمال نہیں کریں گے  تو ہم جانوروں سے بھی بد تر ٹھہریں گے۔یہ حق ہمیں غیر سیاسی سے سیاسی بناتا ہے۔ ہمارےیہ حقوق آسمان سے نہیں اُترے بلکہ حکمرانوں کے انتخاب کا حق استعمال کرنے سے حاصل ہوئے ہیں۔یہ حُسن انتخاب بحث مباحثہ، غور و خوض، دلائل، تحقیق ، لکھنے پڑھنے اور سُننے سے حاصل ہوتا ہے۔فیس بُک یا سوشل میڈیا کے ذرائع سے ہمیں مواقع ملتے ہیں کہ دلائل کے ذریعے آگاہی کے حصول ،  حصول علم، استدلال حتٰی کہ باہمی احترام کو ملحوظ خاطر رکھتے ہوئے شُستہ طنز کرنے کے لئے بھی اِن ذرائع کو بہتر طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔

مخالفانہ خیالات سامنے آنے کی وجہ سے بسا اوقات فیس بُک ہمارے فرسودہ خیالات اور نظریات کوبڑے چیلنج کی طرح ٹھیس پہنچاتی ہے۔ مگر ایک مہذب قوم کے طور پر  اپنا تشخص بنانے کے لئے یہ ہمیں یہ کڑوی گولی نگلنی ہوگی۔ہمیں اس دھچکے کو کو اپنی بیداری کا وسیلہ سمجھنا چاہئے۔یہ حقیقت ہمیں تسلیم کرنی ہوگی کہ انسانی ترقی کے انڈیکس یا کسی بھی معیار کے حساب سے ہماری شہرت دنیا بھر میں نہائت خراب ہے۔ہمیں آئینے کا سامنا کرنے، خود کو سدھارنے، سٹیٹس کو توڑنے، قدیم دیو مالائی نظریات سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لئے تنقید کے نشتروں کا سامنا کرنا ہوگا۔

بلاگ پرتبدیلی طبع کےلئےپاکستان میں پہلی بار  کسی بھی  ادارے کی طرف سے دی آرٹ آف ڈیجیٹل کنزرویشن کے موضوع  پیش کیا جانے والا میرا مضمون ملاحظہ فرمائیں۔

http://beyondthehorizon.com.pk/art-conversation-argument/

اس فورم کا مقصد اپنی بہتری اور قوموں کی صف میں فخریہ انداز میں داخل ہونے کے لئے آگاہی فراہم کرنا ہے۔اس فورم کو پچاس لاکھ سے زائد افراد فالو کر رہے ہیں۔


Political and apolitical. Politics and debate.Awareness & ignorance.

By Ahmad Jawad

For a very long time, and still it is a norm that many of us take pride in the fact that we are not from any political party, we are non political and we are neutral. What exactly it means to belong to a political party? In my humble opinion, one can be a political worker or leader of a political party and one can be a voter and supporter of a political party. Third choice of being neutral means that person does not have the ability to make a choice or he thinks being neutral makes him less vulnerable and more sane. Why I think and believe that having a choice of “who should lead us” is a human instinct and need. Every aspect of life demands us to have a leader by selection or by election or by needs. When it comes to our country, whom should we led by? we tend to become neutral or spectator. In my opinion, which can be contradicted by anyone, it’s a animal behaviour, because animals don’t exercise choice of rights, choice of leader, choice of good or bad, animals are herds and they survive till they are eaten by stronger ones. The animal instinct has never changed but human beings have grown through various civilisations.

All educated people must think, debate, pursue choice of rulers because it’s about us and our generation. If we don’t exercise this choice, we might be worse than animals. This makes us political and not apolitical. Our rights don’t fall from sky, they have to be claimed by making a good choice of our rulers, this choice comes with debate, deliberation, argument, research, reading, writing, and listening, Face book or any other social media tool has given us this opportunity to make good use of this tool by creating awareness to differentiate between good and bad with logic, knowledge, even satire without losing mutual respect.

Facebook sometimes appears as a challenge to our obsolete thoughts and perceptions and we feel hurt when faced with opposite ideas but we should take this pain like a bitter pill to grow as a civilised nation, we should take this as a trigger to our awakening. We must accept the fact, we are one of the worst nation on earth by any standard of human development index or even by reputation. We must be ready to take this bitter pill of critique to see ourselves into the mirror, to make us better, to break status quo and old mythologies.

For a change, read my article on art of digital conversation, a new subject never addressed in any institution of Pakistan.

http://beyondthehorizon.com.pk/art-conversation-argument/

This forum has 5 million followers and it is meant to create awareness to make us better and walk with pride in the league of nation.