My Prediction on Dr Amir Liaquat of BOL TV dated 9 Jan proved on 26 Jan.

1519

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


An excerpt from my article on 9 Jan.

“Public was looking for such voice to expose the ugly face of journalist and media, they found it in the shape of Dr Amir Liaquat. Big names are feeling the heat and insecurity, they must act together to either silence this voice or buy this voice”.

Dr Amir Liaquat silenced on 26 Jan by turning BOL screen into black. What Dr Liaquat forgot that too much truth in a fake and corrupt society is not accepted and you cannot fight the united vested interest of a society. Even his life might be threatened if he continues on his path. He has to come back and join the fake & corrupt society matching and merging the lies & Agendas. Such a path is easy & smooth with little surprises.

Such ruthless control of media will eventually lead to the death of traditional media in the longer time and Social Media will take over the entire public opinion due to its freedom.

Dr Amir Liaquat has been banned on hate speech. To me as a common citizen like hundreds of thousand of his followers on You Tube did not see any hate speech but saw exposing some thugs in the name of media and freedom of speech. I wonder am I the only one who is more concerned when Najam Sethi appears as best advocate of RAW, Indian Intelligence Agency, and at the same time malign ISI, in his talk show. I also feel humiliated as a citizen of Pakistan when Najam Sethi ridiculed behind the door story of Army Chief selection in a talk show, I felt he was laughing at the misery of this nation. His laughters were cruel and carried the under tone of hate speech but what difference does it make, I am ordinary citizen, I am not PEMRA.

Read full article dated 9 Jan.

http://beyondthehorizon.com.pk/a-case-study-on-bol-talk-show-aisay-nahi-chalay-ga/


 

بول ٹی وی کے ڈاکٹر عامر لیاقت کے بارے میری 9جنوری کی پیش گوئی 26جنوری کو درست ثابت ہوئی

احمد جواد

میرے 9جنوری کو لکھے مضمون کا اقتباس ملاحظہ فرمائیں

”صحافی اور میڈیا کے مکروہ چہرے کو بے نقاب کرنے کے لئے لوگوں کو ایسی آواز کی تلاش تھی جو انہیں ڈاکٹر عامر لیاقت کی شکل میں مل گئی۔ بڑے بڑے نام جو اس سےحدت اور عدم تحفظ محسوس کر رہے تھے وہ یقیناً اس آواز کو خاموش کرنے یا اس کو خریدنے کے لئے مشترکہ کوششیں کریں گے”۔

26جنوری کے روز بول کی سکرین کو سیاہی میں بدل کر ڈاکٹر عامر لیاقت کو خامو ش کر دیا گیا۔ ڈاکٹر لیاقت یہ چیز فراموش کر بیٹھے تھے کہ کرپٹ اور بناوٹی معاشرے میں بہت زیادہ سچ  قابل قبول نہیں ہو تا۔آپ کب تک معاشرے کے مشترکہ مخفی مفادات سے ٹکراتے رہیں گے۔ جو کوئی اس راہ پر چلتا رہے گا اس کی زندگی تک خطرے سے دو چار رہے گی۔ اُسے با لآخر واپس آکر اس نقلی اور کرپٹ معاشرے سے ملنا ہے اور جھوٹ کو ایجنڈےکا نام دینا ہے۔چند خدشات  کے باوجود یہ بظاہر آسان اور ہموار راستہ ہے ۔ ڈاکٹر عامر لیاقت کو عدالت سے ریلیف  مل چکا ہے. ۔ لیکن ڈاکٹر عامر لیاقت کو اگلے وار کے لئے تیار رہنا ہو گا۔

میڈیا پر لمبے عرصے تک انتہائی سخت غلبہ کا نتیجہ بالآخر روایتی میڈیا کی موت  کی شکل میں ظاہر ہوگا اور  سوشل میڈیا اپنی آزادی اظہار کی بدولت اس کی جگہ لے گا۔

ڈاکٹر عامر لیاقت پر نفرت انگیز تقریر کے الزام میں پابندی لگا دی گئی ہے۔ ایک عام شہری کی طرح میری جیسےیو ٹیوب پر ان کے ہزاروں چاہنے والوں کو آزادی اظہار اور میڈیا کے لبادے کی آڑ میں ملبوس غنڈوں کو بے نقاب کرنے کے  کوشش کےعلاوہ کوئی نفرت انگیزی نظر نہیں آتی۔ کیا ایک میں ہی ہوں جو نجم سیٹھی کو بھارتی خفیہ ایجنسی کی وکالت کرنے اور آئی ایس آئی کو رگیدنے پر رنجیدہ ہوتا ہے۔ پاکستان کے شہری ہونے کے ناطے میرا دل بہت آزردہ ہوا جب ایک ٹاک شو میں آرمی چیف کی  تعیناتی کےپس پردہ  افسانے کا نجم سیٹھی نے تمسخر اُڑایا۔مجھے ایسے لگا جیسے وہ قوم کی بے بسی پر خندہ زن تھا۔ اس کے ظالم قہقہوں سےنفرت عیاں تھی مگر اس سے کیا فرق پڑتا ہے۔ میں ٹھہرا ایک عام  ساشہری۔ میں کوئی پیمرا تو نہیں۔

نو جنوری کا مکمل مضمون ملاحظہ فرمائیں۔

A Case Study on BOL talk show ” Aisay Nahi Chalay Ga”.