It was RAW, it is RAW, it will remain RAW. Deal with it or battle with it. Make your choice today.

1186
.

Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/. can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”


را ء تھی، را ء ہے اور را ءرہے گی

اس سے معاملہ طے کرنا ہے یا اس سے جنگ کرنی ہے،فیصلہ آج ہی کرلیں

 احمد جواد

تقریباً دس لاکھ افغانی لوگ پچھلی تین دہائیوں میں ہمارے علاقے میں کاروبار قائم کر چکے ہیں،  پاکستانیوں کے ساتھ شادیاں رچا  چکے یہاں تک کہ ہمارے شناختی کارڈ کے حاصل کرکےہمارے معاشرے میں رچ بس چکے ہیں۔بھارت دیر سے اس تاک میں تھا کہ  ان افغان مہاجرین کے اپنے پچھلے گھروں سے جاری رہنے والے  مستقل روابط سے فائدہ اٹھایا جائے۔کٹا پھٹاپاک افغان بارڈر  راء کےواسطےسونے پر سہاگہ ثابت ہوا۔مشرف دور میں فوج اور سیاسی پارٹیوں میں بڑھتی ہوئی خلیج راء کے لئے بہترین موقع تھا۔الطاف حسین کو ذمہ داری دی گئی کہ کراچی کو تباہ کرکے پاکستانی معیشت کا گلا گھونٹ  دے۔مشرف نے اپنے اقتدار کو مستحکم کرنے  کے لئے الطاف حسین پر عنایات کیں۔بگٹی کے قتل نے ناراض بلوچوں کو راء کی چھتری تلےجمع ہونے کا موقع فراہم کیا۔الیکٹرانک میڈیاکےاچانک ظہورسے میڈیاعوامی سوچ کا بڑا مضبوط کھلاڑی بن کرسامنے آیا جس کی بنا پر بکاؤ اینکروں کا ایک گروہ  تشکیل پایا۔زرداری کے پانچ سالہ دور میں روز افزوں رشوت ستانی نے قومی سوچ اور منصوبہ سازی کا حلیہ بگاڑ دیا۔

بالآخر افغان مہاجرین، بے پناہ کرپشن، الطاف حسین، ناراض بلوچوں، سیاسی تقسیم، بُری حکمرانی،پولیس کی بطور ادارہ تباہی، بکاؤ میڈیا اور نواز شریف کے لئے نرم گوشہ جیسے تمام عناصر نے مل کر راء کو موقع دیا کہ وہ پاکستان میں جب چاہے جہاں چاہے اپنی مرضی کے ہدف پر حملہ آور ہو۔راء کا کمال یہ ہے کہ اس کے ہر حملے کی ذمہ داری  کوئی نہ کوئی طالبان یا  جنگجو گروپ  قبول کر لیتا ہے ۔ہماری حکومت اور میڈیا اس قبول کر لینے کی تاویل پر مطمئن ہو جاتے ہیں۔بد قسمتی سے حکومت یا میڈیا   میں کوئی شخص ان حملوں کی پشت پناہی کرنے والے  اصل دشمن کوبے نقاب کرنے پر آمادہ نہیں۔راء  پاکستان پر حملہ آور ہونے کے لئے ایسے مقام پر نششت جمائے بیٹھا ہے جہاں سے وہ جب چاہے جہاں چاہے ضرب لگا سکتا ہے۔راحیل شریف کے تین سالہ دور میں راء کو سنجیدگی سے لیا گیا اور  اس کے خلاف سخت مزاحمت کی گئی اور  کئی طرح سے اسے ہزیمت پہنچائی گئی۔راء بڑے تحمل کے ساتھ راحیل شریف کی ریٹائرمنٹ کے بعد ان کے منظر سے ہٹنے کی منتظر رہی۔آج پھر راء اس مقام پر ہے جہاں یہ اپنے ہدف کا تعین کر سکتی ہے اور کسی بھی افغان گروپ کو منتخب کر کے بڑی کامیابی سے ٹھیک ٹھیک نشانہ لگا سکتی ہے۔ہر حملہ کچھ اہم مقاصد کے حصول کے لئے کیا جاتا ہے۔ہر حملہ کے بعد سیاسی اور عسکری قیادت کے رٹے رٹائے بیانات آتے ہیں،میڈیا پر حسب معمول اُبال آتا ہے،مرنے والوں کی لاشوں پر آہ و بکا کرنے والوں کے ساتھ اظہار افسوس کیا جاتا ہے۔کچھ دنوں پر حالات معمول پر آجاتےہیں۔راء پھر سے نئے اہداف  اور وقت کی منصوبہ بندی میں مصروف ہو جاتی ہے اور قوم  پھر سےخواب خرگوش کے مزے لینے لگتی ہے۔

آخر پچھلے دس سالوں سے  پاکستانیوں کو تحفظ فراہم کرنے کی ذمہ داری کس پر ہے؟ وزیر اعظم پر، وزیر داخلہ پر، آئی جی پولیس پر،آئی ایس آئی پر،خفیہ ایجنسیوں پر،آرمی چیف پر،نیکٹا پر، پارلیمنٹ پر یا سپریم کورٹ پر؟ہمارے سسٹم کی خوبی یہ ہے کہ ہر کوئی دوسرے کی جانب انگشت نمائی کر دیتا ہے مگر کوئی نہیں جو خم ٹھونک کر  آئینی طور پر تفویض کی گئی ذمہ داریوں کو پورا کرے۔کیا ہم اس ناکارہ نظام کو جاری رکھیں گے؟

یہ سوال ان 80,000بے گناہوں سے پوچھیں جو گزشتہ دس سالوں میں مارے گئے۔ یہ سوال دہشت گردی کا نشانہ بننے والوں کے پانچ لاکھ لواحقین سے پوچھیں۔اس سوال کا جواب وہی دیں گے کیونکہ ان کوصحیح جواب معلوم ہے۔باقی قوم کے لوگ اس آس پر  زندہ ہے کہ وہ بچےرہیں گے یا وہ خود کو بچ جانے پر خوش قسمت سمجھتے ہیں یا ان کو گمان ہے کہ ہمیشہ بچے رہیں گے۔

میں نواز شریف کی بھارت دوستی کی پالیسی سے اب متفق ہوں کیونکہ اگر ہم  اس قابل نہیں کہ کسی کے ساتھ دشمنی سہار سکیں تو بہتر ہے اس سے دوستی کر لیں۔ہاں جب تک کہ ہم متحد ہو کر اتنے مضبوط ہو جائیں کہ بھارت جیسے دشمن کے ساتھ دشمنی مول لے سکیں ہمیں بھارت دوستی کا تہیہ کر لینا چاہئے


It was RAW, it is RAW, it will remain RAW. Deal with it or battle with it. Make your choice today.

By Ahmad Jawad

With a million Afghan refugees on our territory for more than 3  decades who settled their businesses here, got married with Pakistanis, got even National ID cards and became part of our society. India had long planned to exploit same Afghan refugees with their constant Afghan links back home. A porous Pak Afghan border was like Icing on cake for RAW. A deep drawn divide between political parties and Army during Musharraf times was an great opportunity for RAW. Altaf Hussain was given the task to destroy Karachi to economically strangle Pakistan. Musharraf gave his blessing to Altaf Hussain to strengthen his own rule. Bugti murder became a new opportunity for RAW to bring aggrieved Baluchis under the umbrella of RAW. Sudden growth of electronic media allowed media to become strongest player in public opinion and created group of anchors who were ready to cash their voice, For 5 years, Zardari allowed rampant corruption and blocked every national theme or strategy.

Finally culmination of all these events of Afghan refugees, massive corruption, Altaf Hussain, Baluch grievances, political divides, bad governance, destruction of Police as an institution, sold media and soft corner of Nawaz Sharif just made an ideal opportunity for RAW to strike with choice of target and choice of timing anywhere in Pakistan. The beauty of RAW is that responsibility of each attack is accepted by a group of Taliban or militant groups and our government and media are eager to accept this version of responsibility. Unfortunately,nobody is ready from Government or Media to identify the real enemy who orchestrated  such strikes. RAW was best positioned to hit Pakistan wherever it wants, whenever it wants. Raheel Sharif gave 3 years of real resistance and serious concerns to RAW and even partially defeated them on many accounts but RAW was patient enough to see Raheel Sharif retiring from the scene. Today RAW is sitting on a high position where it can select target, select Afghan group for attack and launch the attack with precision and success. Every attack is planned to achieve certain strategic objectives. Every attack brings usual statements from Political and Military leadership, usual hype by media, usual sorrow by nation, bodies of victims and sobbing of their near and dears. In a few days, everything is normal. RAW starts new planning, new targets and new timing while nation goes to sleep again.

Who is actually responsible to provide safety and security to Pakistanis in last 10 years? Is it PM? Is it Interior Minister? Is it IG Police? Is it ISI? Is it IB? Is it Army Chief? Is it NECTA? Is it Parliament? Is it Supreme Court?

The beauty of our system is that each one of them can point fingers to each other but none is ready to take responsibility either by constitution or by choice.

Do we have to continue with this rotten system?

Ask this question from 80,000 innocent who have been killed in last 10 years, ask those half a million near and dear of victims, they will answer the question because they know what is the real answer, rest of nation either hope to survive or feel lucky to be safe or think they will continue to survive.

I now tend to agree with Nawaz Sharif’s India friendly policy just because if we are not good enough to afford an enemy, its better to make him friend. The day we are united, we are prepared, we are stronger, we may opt the luxury of having an enemy like India, till that time, let’s resolve with India.