Resurrection of Sher Shah Suri – Bloodline Never Dies.

79

By Ahmad Jawad


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”

By Ahmad Jawad

I believe all great leaders are resurrected to complete the unfinished agenda or revive the past glory. Great leaders die but their virtues & glory are resurrected through the journey of life. 

Ertugrul is hero of Ottoman Empire who laid the foundation of Ottoman Empire. Turkey has made a TV Serial on Resurrection of Ertugrul. Today Turkey sees Tayyip Erdogan as resurrection of Ertugral & Ottoman Empire. Turkey hopes to revive its past glory under the leadership of Erdogan.
Mahathir is a unique case where he resurrected himself as Prime Minister of Malaysia at the age of 93 years. He has come back to complete the unfinished agenda of progress & development.
Sher Shah Suri is the most glorious example of a Afghan/Pashtun Muslim ruler in the once united region of today’s India, Pakistan & Afghanistan who laid the outstanding foundation of infrastructure & reforms over which Mughal Empire was later built. Sher Shah Suri in his short tenure of 6-7 years introduced judicial system, revenue collection system, Patwar system, postal service, roadside Inn, customs, road network & many other areas. Sher Shah Suri is the most Avant Garde and visionary leader in the entire history of India, Pakistan & Afghanistan.
In Pakistan, Niazi tribe hails from Haibat Khan Niazi, the most powerful noble of Sher Shah Suri & Commander of his Army. In Pakistan & Afghanistan, Suri/Zuri tribe comes from Sher Shah Suri.
Imran Khan Niazi always took a great deal of inspiration from Sher Shah Suri just like Haibat Khan Niazi once was greatly inspired by Sher Shah Suri.
In 80s, Imran Khan did a fashion show to act as a model to portray Sher Shah Suri in England. Nature must be smiling over Imran Khan when he was portraying Sher Shah Suri, not knowing that one day he will himself be Sher Shah Suri of modern times.
Today, we see resurrection of Sher Shah Suri in the form of Imran Khan Niazi and he is expected to revive past glory of this region.
At the same time, there is resurrection of Haibat Khan Niazi as well when Qasim Khan Suri, a PTI politician from Baluchistan stood guard to Imran Khan like a true soldier for 126 days of Dharna in Islamabad. In the midst of thick tear gas smoke, while many ran away, some were hiding around, Qasim Khan Suri was standing like Haibat Khan to protect his Sher Shah Suri. Modern day tear gas was unable to deter Haibat Khan of old times. Some sarcastically remarked to have blood test of Qasim Khan Suri to find out why tear gas has no effect on him.
After 500 years, it looks like Sher Shah Suri is back with his general Haibat Khan to finish the unfinished agenda and revive past glory. Imran Khan as Sher Shah Suri and Qasim Khan Suri as Haibat Khan belong to a historical bond of bravery, vision & nobility.
We are going to witness Sher Shah Suri once again in modern times and he is Imran Khan. He is a very bad news for corrupt mafias, status quo & anti Pakistan elements.
Qasim Khan Suri joined PTI in 1996 and became soldier of Imran Khan. For 22 years, he made hundreds of journeys from Quetta to Islamabad driving himself even during most dangerous times on this route. His mother got cancer and for years, he had been serving her and bringing her to various places for treatment. Imran Khan also visited his mother during her illness.
I find another analogy of a rivalry once existed between Babur and Sher Shah Suri, to a modern day rivalry between Mahmood Khan Achakzai and Qasim Khan Suri. Babur could sense the danger from rebellious manners of Sher Shah Suri when he took out his knife to cut the meat without waiting for Babur in a state reception.
On the other hand, Mahmood Khan Achakzai could not notice Qasim Khan Suri’s rebellious manners when he hosted dinner for Imran Khan & Qasim Suri at his place in 2009. Achakzai could not see the danger of a tiger in making when Qasim was eating meat like a tiger. All he could say to Imran Khan was “He has eaten very well”. Imran Khan smiled & reminded Achakzai “ He is descendent of Sher Shah Suri”
Babur tried to block the exit of Sher Shah Suri from the fort after the reception but Sher Shah Suri successfully came out after sensing danger timely. Later Sher Shah Suri dethroned Humayun and became a powerful ruler of India.
Achakzai might have sensed the danger in rebellious manners of Qasim Khan Suri at that time but never considered him worth of a danger for a strong Baluch tribal Lord. In 2018, Qasim Khan Suri ended the political career of Mahmood Khan Achakzai.
Bloodline of Sher Shah Suri and Haibat Khan are resurrecting after nearly 500 years but this time combination is slightly changed. Imran Khan has taken role of today’s Sher Shah Suri and Qasim Khan Suri has taken role of Haibat Khan. Both tribes of Niazi and Suri/Zuri have historical partnership of bravery, determination & ability.
I have the honour of working together with Imran Khan & Qasim Khan Suri in last 15 years and it will be great privilege to see resurrection of Sher Shah Suri and Haibat Khan.
Resurrection of Ertugrul, Resurrection of Mahathir,  Resurrection of Haibat Khan and Resurrection of Sher Shah Suri will bring back past glory.
Bloodline never dies. It’s just a matter of time.

Welcome to Naya Pakistan.


شیر شاہ سوری کی واپسی

احمد جواد

مجھے یقین ہے کہ عظیم رہنما  ماضی کی عظمت  دہرانے اور نا مکمل کارناموں کی تکمیل کے لئے کسی نہ کسی روپ میں دوبارہ جلوہ گر ہوتے ہیں۔عظیم لوگ اللہ کو پیارے تو ہوجاتے ہیں مگر ان کے کارنامے اور شان و شوکت زندگی کے سفر میں پلٹ کر ضرور آتے ہیں۔
ارطغرل سلطنت عثمانیہ کے ہیرو تھے جنہوں نے سلطنت عثمانیہ کی بنیاد رکھی۔ترکی نے ارطغرل کے احیاء پر ایک ٹی وی سیریل بھی بنائی ہے۔آج ترکی کو طیب اردگان کی شکل میں ارطغرل اور سلطنت عثمانیہ دوبارہ زندہ ہوتے دکھائی دے رہےہیں۔ترکی اردگان کی قیادت میں ماضی کی شان وشوکت کے دوبارہ حصول  کے بارے پُر امید ہے۔
مہاتیر محمد اپنی طرز کی نادر داستان ہیں  جو 93برس کی عمر میں ملائشیا کےوزیر اعظم بن کر پھر سےخود   ہی آکروارد  ہوئے ہیں۔ ان کی واپسی کا مقصد ترقی اور خوشحالی  کے ایجنڈے کی تکمیل کرنا ہے۔
شیر شاہ سوری آجکل کے پاکستان، ہندوستان اور افغانستان پر مشتمل خطے کے سب سے عظیم الشان حکمران کی وہ شاندار مثال ہے جس نے اصلاحات اور ترقی کے ایسے ڈھانچے کی بنیاد رکھی جس پر بعد میں مغل سلطنت استوار کی گئی۔ شیر شاہ  سوری نے اپنے چھ سات سالہ مختصر دور حکومت میں نظام عدل، مالیہ وصولی کا نظام، پٹوار کا نظام، ڈاک کا نظام اور راہداری کا نظام متعارف کرائے،  سڑکوں کےکنارے سراؤں کی تعمیر  کی گئی، سڑکوں کا جال بچھایا اور بہت سے دوسرے شعبوں میں نمایاں کارنامے سر انجام دئیے۔ شیر شاہ سوری پاکستان ، بھارت اور افغانستان کا سب سے اوّلین صاحب بصیرت حکمران تھا۔
پاکستان میں نیازی قبیلے کاجد امجد ہیبت خان نیازی تھا جو شیر شاہ سوری کا سب سے طاقتور معتمد خاص تھا اور اس کی فوج کا سپہ سالار تھا۔ پاکستان اور افغانستان میں آج بھی سوری\ زوری قبیلے کا تعلق شیر شاہ سوری سے جا ملتا ہے۔
عمران خان نیازی شیر شاہ سوری کا  اسی طرح بہت بڑامداح ہے جس طرح کبھی ہیبت خان شیر شاہ سوری کا دیوانہ ہوا کرتا تھا۔
80ء کی دہائی میں انگلینڈ میں ہونے والے فیشن شو میں عمران خان شیر شاہ سوری  کا کردار اجاگر کرنے کے لئے اُس کےروپ میں جلوہ گر ہوئے۔اس وقت شائد قدرت مسکرا رہی تھی مگر ان کو خودمعلوم نہ تھا کہ جس کے کردار کو وہ اجاگر کر رہے ہیں ایک دن وہ خود دور جدید کے شیر شاہ سوری بن جائیں گے۔
آج ہمیں عمران خان نیازی کے روپ میں دوسرا شیر شاہ سوری جنم لیتا نظر آرہا ہے اور ان سے توقعات وابستہ کر لی گئی ہیں کہ وہ اس خطے کی عظمت رفتہ  بحال کرائیں گے۔
عین اِسی وقت قاسم خان سوری کے ر وپ میں ایک ہیبت خان نیازی بھی نمو دار ہورہا ہے ۔ قاسم خان سوری پی ٹی آئی کا رہنما ہے جس کا تعلق بلوچستان سے ہے۔ وہ اسلام آباد کے 126روزہ دھرنے کے دوران ایک سچے سپاہی کی طرح عمران خان کے ساتھ رہا ہے۔ آنسو گیس کے گاڑھے دھوئیں   کے دوران جب بہت سے لوگ بھاگ نکلتے تھے یا  ادھر اُدھرچھپ جاتے تھے،قاسم خان سوری  ہیبت خان کی طرح اپنے شیر شاہ سوری  کی حفاظت کی خاطر ڈٹ کر کھڑا رہتا۔ آج کے زمانے کی آنسو گیس زمانہ قدیم کے  ہیبت خان کو روک نہیں سکتی تھی۔کچھ لوگ ہنسی مذاق میں  کہتے  تھے  کہ قاسم خان سوری کے خون کا معائنہ کراکے دیکھا جائے کہ اس پر آنسو گیس کیوں اثر نہیں کرتی۔
پانچ سو برس بعد یوں محسوس ہوتا ہے جیسے عظمت رفتہ کی بحالی اور نامکمل منصوبے مکمل کرنے کے لئے شیر شاہ سوری اپنے جرنیل ہیبت خان کو ہمراہ لئے لوٹ آیا ہے۔عمران خان بطور شیر شاہ سوری اور قاسم خان سوری   بطور ہیبت خان تاریخی طور پر بہادری ، بصیرت اور شرافت کے لئے لازم و ملزوم ہیں۔
دور جدید میں ہم عمران خان کو شیر شاہ سوری  کے روپ میں دیکھیں گے۔ وہ کرپٹ مافیاؤں، سٹیٹس کو اور پاکستان مخالف عناصر کے لئے قہر ثابت ہوگا۔
مجھے دور جدید کےمحمود خان اچکزئی اور قاسم خان سوری کی مخالفت میں اور بابر اور شیر شاہ سوری کے دور کی مخالف میں مماثلت نظر آتی ہے۔ بابر نے تو شیر شاہ سوری کے باغیانہ انداز میں اُسی وقت خطرے کی بُو بھانپ لی تھی جب بابر کی طرف سے دئے گئے عشائیے میں شیر شاہ سوری  نے میزبان کے کھانے کی ابتداء کرنے سے پہلے گوشت کھانے کے لئے خنجر نکال لیا تھا۔
دوسری جانب محمود خان اچکزئی نے قاسم خان سوری کے باغیانہ اطوار کا اس وقت ادراک نہ کیا جب2009ء میں اچکزئی نے عمران خان اور قاسم خان سوری کو اپنے گھر مدعو کیا تھا۔ اچکزئی کو اس وقت اس شیر کی موجودگی کا خطرہ محسوس نہ ہوا جب قاسم خان سوری شیر کی مانند گوشت کھانے میں مصروف تھا۔اچکزئی نےعمران خان سے صرف اتنا ہی کہا کہ قاسم نے خوب سیر ہوکرکھانا کھایا ہے۔عمران خان نے مسکراتے ہوئے اچکزئی کو یاد دلایا کہ اس کا سلسلہ نسب بھی شیر شاہ سوری سے ملتا ہے۔
86مغل حکمران بابر نے  عشائیے کے بعد قلعے سے شیر شاہ سوری کی رخصتی کا راستہ روکنے کی کوشش کی مگر بر وقت خطرہ بھانپتے ہوئے وہ فرار ہونے میں کامیاب ہو گیا۔  بعد میں شیر شاہ سوری نے ہمایوں کا تختہ الٹ دیا اور ہندوستان کا طاقتور حکمران بن گیا۔
اچکزئی نے قاسم خان سوری کے باغیانہ اطوار سے خطرے کی بو سونگھ لی تھی مگر اُس وقت اُس نے اس سپاہی کو  بلوچستان کے پشتون قبیلے کےسردار کے لئے خطرے کے طور پر زیادہ اہمیت نہ دی۔سال 2018ء میں قاسم خان سوری نے محمود خان  اچکزئی کے سیاسی عہد کا خاتمہ کر دیا۔
شیر شاہ سوری اور ہیبت خان نیازی کا خون پانچ سو برس بعد پھر جوش مار رہا ہے مگر اس بار یہ ترکیب تھوڑی بدل گئی ہے۔ عمران خان شیر شاہ سوری  کے انداز میں منظر پر آئے ہیں جب کہ قاسم خان سوری ہیبت خان کا روپ دھار رہا ہے۔نیازی اور سوری\زوری دونوں قبائل کی تاریخی طور پر بہادری، حوصلہ مندی اور قابلیت میں ساجھے داری ہے۔
مجھے بھی گذشتہ پندرہ سالوں میں عمران خان اورقاسم خان سوری کے ساتھ کام کرنے کی سعادت نصیب ہوئی۔  میں نے اپنی آنکھوں سے شیرشاہ سوری اور ہیبت خان کااحیاء دیکھنے کا اعزاز بھی حاصل ہوا ۔
ارطغرل کانیا جنم، ہیبت خان نیازی کا نیا روپ اور شیر شاہ سوری کا احیاء ہمارے ماضی کے سنہری دور کی واپسی کا باعث بنیں گے۔
وقت کی  بات الگ مگر خون کبھی نہیں مرتا۔
نئے پاکستان میں خوش آمدید۔
Facebook Comments