Rise of Ottoman Empire through the lens of most inspiring Turkish TV serial – Dirilis Ertugrul.

2680
.

 

Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”


ارطغرل سلطنت عثمانیہ کا آغاز ایک شاندار ترکی ٹی وی سیریل  تاریخ کے آئینے میں

احمد جواد

 ارطغرل ترک ٹی وی سیریل ہے جو ساٹھ ممالک میں دیکھی جارہی ہے۔ یہ محض ٹی وی سیریل ہی نہیں بلکہ سلیمان شاہ اور اس کے بیٹے طغرل کی شاندار تاریخ کا جھروکہ بھی ہے جب سلطنت عثمانیہ کی بنیاد رکھی گئی اور اسلامی اقدار کے طویل عہد کا احاطہ بھی کرتی ہے۔اس ٹی وی سیریل نے واقعات کو آج کی اسلامی دنیا اور شام میں ہونے والے واقعات سے جوڑ دیا ہے۔

ترکی وہ کام کرنے لگا ہے جو امریکہ پچھلے 80سال سے کر رہا ہے یعنی فلموں اور ٹی وی سیریل کے ذریعے تاریخ لکھنے کا کام تاکہ آنے والی نسلوں کو آگاہ کیا جائے۔میری نظر میں طیب اردگان کو دور جدید کے غازی ارطغرل کے طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔

 ارطغرل ٹی وی سیریل کو ضرور دیکھنا چاہئے تاکہ مسلمانوں کو سلطنت عثمانیہ کے دور میں اسلام کی عظمت کا پتہ چل سکے۔یہ ٹی وی سیریل ہالی وُڈ کی کسی بھی ٹی وی سیریل کے برابر کا جوڑ ہے۔اس کا مضبوط سکرپٹ، بہترین ایکٹنگ، اعلیٰ درجے کے سین، تیز ٹیمپو اور خوبصورت مناظر ارطغرل کی جان ہیں۔

:آئے ہم سلطنت عثمانیہ کے عروج  کو سمجھنے کے لئے کچھ بنیادی نکات کا احاطہ کریں

ہمارے ہاں جسے ہم سلطنت عثمانیہ کہتے ہیں کا نام اس کے پہلے حاکم عثمان غازی کے نام پر رکھا گیا۔

عثمان غازی کے والد ارطغرل سلطنت عثمانیہ کے اصل ہیرو تھے۔

سلیمان شاہ کا مزار ترکی کی واحد زمین ہے جو ترکی سے باہر ہے۔

سلطنت عثمانیہ کے بانی کے دادا سلیمان شاہ کا مزاراس کے ترک مقام سے شام منتقل کر دیا گیا تھا۔

ایک دفعہ ترک افواج  شام میں داخل ہوئیں تاکہ سلیمان شاہ کے مقدس مزار کو الیپو کے محفوظ مقام سے منتقل کر دیا جائے۔

اس مہم میں 600فوجیوں نے حصہ لیا تاکہ اسے 38محافظوں سمیت واگذار کرایا جا سکے۔

 محافظوں کو بازیاب کرنے کی منصوبہ بندی انتہائی احتیاط سے کی گئی جسے اپریشن فرات کا نام دیا گیاتھا۔ اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ ترکی اس مزار کو کس قدر اہمیت  دیتا ہے۔

سلیمان شاہ کون تھا؟

سلیمان شاہ کے بارے کہا جاتا ہے کہ وہ ایک قبیلے کےسربراہ تھے جو 1178ء سے 1236ء کے دوران زندہ رہے۔ وہ سلطنت عثمانیہ کے بانی کےدادا تھےجو چھ صدیوں تک قائم رہی اور اس کے بعد 1923ء میں لائبیریا کی جنگ کے بعد ترک جمہوریہ کا قیام عمل میں آیا۔

سلیمان شاہ ارطغرل کے والد تھے جو سلطنت عثمانیہ کے بانی عثمان اوّل کے والد تھے جس کی ابتدا 13ویں صدی میں ہوئی۔

اغوظوں کی ایک شاخ کے قبیلہ کائی نے سلجوقی عہد میں وسطی ترکی میں اناطولیہ کے مشرق سےمغرب تک ہجرت کی۔سلیمان شاہ سلجوقی عہد میں بارہویں صدی کے فوجی کمانڈر تھے اوراناطولیہ میں بسنے والے پہلے ترک گروہ میں شامل تھے۔

ء1921 میں انقرہ میں ہونے والے ترکی اور فرانس کے درمیان ہونے والے معاہدے میں فرانس نے سلیمان شاہ کےمزار اور اس کے نواح کی زمین  واگذار کردی۔ اس وقت شام پر فرانس کا قبضہ تھا۔

مارچ 2014ء میں اُس وقت ترکی کے صدر عبداللہ گل نے کہا تھا کہ سب کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ ترکی کے باہر زمین کا یہ ٹکڑا ہمارا اثاثہ ہے۔ اس کی حفاظت اسی طرح کی جائے گی جس طرح مادر وطن کی حفاظت کی جاتی ہے۔ یہ ترکی کی زمین ہے اور اس پر ترک پرچم لہرائے گا۔ تاہم اسد جھیل پر پانی کے ذخیرے کی تعمیر کی بدولت مزار سیلاب کی نذر ہونے کی وجہ سے 1974ء میں مزار کو 50میل شمال کی جانب منتقل کر دیا گیا۔


Rise of Ottoman Empire through the lens of most inspiring Turkish TV serial – Dirilis Ertugrul.

By Ahmad Jawad

Dirilis Ertugrul is the most inspiring Turkish TV Serial and so far being watched in 60 countries of the world.

The serial is not only a window to the great history of Suleyman Shah and his son Ertugrul which became foundation to the rise of Ottoman Empire, it’s also a complete journey of Islamic values. The events of TV Serial can be correlated with current events in Syria and Islamic world.

Turkey is doing what United States has been doing since 80 years to write history through movies and serials to inspire its generations.

To me Tayyip Erdogan can be seen as Ertugrul Ghazi of today’s modern times.

Dirilis Ertugrul is a must watch TV serial for every Muslim to know the greatness of Islam under Ottoman Empire. TV Serial is at par with with Hollywood TV Serials. Very strong script, outstanding acting, top class action scenes, fast pace and beautiful locations is all about Diliris Ertugrul.

Let’s have some basic understanding on the history of rise of Ottoman Empire.

Ottoman Empire was named after its first ruler Osman Ghazi which is commonly spoken as “Sultanatay Osmania” in our language.

Ertugrul, Father of Osman Ghazi, is the real hero behind rise of Ottoman Empire. Ertugrul father was Suleiman Shah. Turkey’s only small piece of land outside Turkey is the tomb of suleyman shah.

The tomb of Suleyman Shah, the grandfather of the Ottoman Empire founder, was moved from its Turkish enclave in Syria, but what is the significance of his tomb?

Turkish troops entered Syria in the dead of night on Saturday to destroy the current tomb of Suleyman Shah and move the precious shrine to a safer place at Esme region of Aleppo.

The operation was carried out by nearly 600 soldiers to also evacuate the 38 guards – one soldier was killed in an accident during the military operation.

The evident planning and care taken to rescue the guards – in an operation called Shah Euphrates – and protect the tomb reflects the value Turkey has in this shrine.

Who was Suleyman Shah?

Suleyman Shah is believed to have lived from 1178 until 1236 and the Turkic tribal leader is the grandfather of Osman I, the founder of the Ottoman Empire which lasted for six centuries. Turkey became a republic after the War of Liberation in 1923.

Shah is the father of Ertuğrul Ghazi, who in turn is the father of Osman I, the empire’s first sultan and after whom the empire, which began in the 13th century, was called (Osman means Ottoman in Turkish).

The Kayi tribe was a branch of the Oghuzs who migrated from east to west and ended up in Anatolia, central Turkey, during the Seljuq period. Shah was a 12th century military leader of the Seljuk Empire, one of the first Turkish groups to settle in Anatolia.

in 1921, the Treaty of Ankara signed by Turkey and France granted the former the land surrounding the tomb as well as the tomb itself. During this period, Syria was under French rule.

In March 2014, Abdullah Gul, Turkey’s former president, said: “Our sole piece of land outside our homeland is this. It will be protected the way our homeland is protected. It’s Turkey’s land and it will have its flag there. I want everybody to know this.”

However, the mausoleum has been moved previously in 1974 about 50 miles (80km) to the north when the tomb was flooded because of the construction of a new dam and a reservoir called Lake Assad.