Why our sickening media needs heavy dose of antibiotic in the form of Dr. Amir Liaquat.

481


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ”Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/ and can be contacted at “pakistan.bth@gmail.com”

ہمارےبیزار کن میڈیاکو ڈاکٹر عامر لیاقت جیسےقوی تریاق کی ضرورت

کیوں پڑتی ہے؟

احمد جواد

جن ممالک میں میڈیاکے ضابطے کمزور ہوتے ہیں وہاں وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ  روائتی میڈیادیوتا کا روپ دھار لیتا ہے۔وہ کسی کا بھی محاسبہ کر سکتا ہے مگر کوئی اس کی جانب  انگلی نہیں اٹھا سکتا۔اب سوشل میڈیا نے اس کا محاسبہ شروع کردیا ہے۔اب وہ دیوتا نہیں رہا اور وہ سوشل میڈیا کے ریڈار کی زد میں ہے۔جب سیاسی کرپشن نے پاکستان میں صحافت کو پراگندہ کردیا تو لوگ میڈیا میں ایسی آوازوں کے متلاشی تھے جو ان کو بے نقاب کرے۔میڈیا گروپوں کے درمیان محاذ آرائی نے  ایک دوسرے کو بے نقاب کرنے کے ماحول کو خوب گرمایا۔عوام ان کو بے نقاب ہوتے اور خوشنما  پردوں کے پیچھے چھُپے ان کے بد نما چہروں کے بے نقاب ہونے سے محظوظ ہوتے رہے۔عامر لیاقت لاکھ متنازعہ سہی مگردلیل اور مباحثہ کےفن میں مہارت سے لیس ہو کر  انہوں نے میڈیا کی جنگ کے میدان میں ہلچل مچا دی ہے۔ان کی دوسرے اینکروں کو بےنقاب کرنے کی صلاحیت لاجواب ہے۔ایک دوسرے کو بے نقاب کرنے کی دوڑ میں صحافت کی تعریف بے معنی ہو گئی ہے کیونکہ ایجنڈا کی آمد کے ساتھ ہی مدتوں پہلے صحافت دم توڑ چکی ہے۔ایجنڈا کے ہیر پھیر میں بیچاری قوم ہونق بنی بیٹھی ہے۔صحافت اشتہاروں کی دبیز تہوں میں سسک رہی ہے حالانکہ مہذب ممالک میں اشتہارات کے لئے ضابطے موجود ہیں۔جعلی ریٹنگ نے صحافت کو مارڈالا۔ ایک ہی گروپ کو پرنٹ اور الیکٹرانک لائسنس کا اجرا صحافت کی موت کا باعث بنا جس کی مہذب دنیا میں مثال نہیں ملتی۔صحاف موت کے گھاٹ اُتر گئی جب حکومت نے سال بھر میں اس کی تشہیر اور حکمرانوں کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے کے لئے الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا کو بارہ ارب روپے ادا کئے۔صحافت اس وقت مر گئی جب ایک سیاسی جماعت کے مفادات کی رکھوالی کے لئے ایک صحافی کو عبوری حکومت میں وزیر اعلیٰ بنایا گیا۔ صحافت دوبارہ وفات پا گئی جب اُسی صحافی کو پنکچروں کے کام کا عوضانہ دینے کے لئے پاکستان کرکٹ بورڈ کا اعلیٰ ترین عہدہ دیا گیا۔جب دوسرے درجے کے صحافی کو صحافت پر قابو پانے کے لئے پیمرا کا چیئر مین لگایا گیا تو صحافت نے دم توڑ دیا۔جب کالم نگاروں کو انعام کے طور پرسفیر بنا یا گیاصحافت مر گئی۔

اس قسم کی صحافت کے مقابل اسی طرح کی مہلک صحافت کی ضرورت ہے جومبشر لقمان اور عامر لیاقت کے روپ میں اُبھری ہے۔مبشر لقمان نے روائتی میڈیا  کے مقابلے میں بیداری کا جذبہ پیدا کرنے کی بھر پور کوشش کی لیکن بےجان مگر متحد میڈیا مافیا کے مقابے میں وہ جنگ ہار گیا اور اب مبشر لقمان جیسا پروگرام کہیں نہیں ہے۔اس موقع پر عامرلیاقت سامنے آئے اور اس کی جگہ سنبھالی۔

کیا کبھی ہمیں اچنبھا ہوا کہ میڈیا کی جھوٹی ریٹنگ نہیں بلکہ یو ٹیوب کی شفاف ریٹنگ کے حساب سے مبشر لقمان اور عامر لیاقت نے مقبولیت کے تمام ریکارڈ توڑ ڈالے ہیں۔آج سر شام نوجوان نسل ٹی وی پر عامر لیاقت کا پروگرام دیکھنے کیوں بیٹھ جاتی ہے؟ وہ اس لئے کہ انہیں روزانہ ٹاک شوز کے ذریعے ملنے والی صحافتی خوراک سے جو ذہنی کوفت ہوتی ہے اس سے چھٹکارا ملتا ہے۔عامر لیاقت میڈیا کے لئے خطرے کی گھنٹی ہیں۔اگر وہ نہ جاگا تو سوشل میڈیا یقیناًاس طرح کی صحافت کے لئے موت کا پروانہ  ہے۔


Why our sickening media needs heavy dose of antibiotic in the form of Dr Amir Liaquat.

By Ahmad Jawad

In countries with weak media regulations, traditional media over a period of time became like gods. They could judge anyone but nobody could judge them. Social Media has now started judging them. They are no more gods, they are watched under the radar of social media. When political corruption rotted the Journalism in Pakistan, people started looking for voices within media to expose them. Battles among media groups further fuelled the environment of exposing each other. Public loved to see them exposing each other and see their ugly faces behind colourful screens. Amir Liaquat a highly controversial Anchor but highly skilled with art of debate and logic stormed the arena of media battles. His ability to expose other anchors is par excellence. Under the current storm of exposing each other, Journalism definition becomes irrelevant because journalism died long ago with the birth of Agendas. Agendas which are sold and purchased making fool of poor nation. Journalism went under the thick and deep layers of ADs which otherwise are well regulated in civilised countries. Journalism also died under fake ratings, Journalism died when same media group got both licenses of electronic and print media which is a rare example in civilised world, journalism also died when a Government paid 12 Billion rupees in a year to print and electronic media for self promotion and running agenda of rulers, journalism also died when journalist was made Chief Minister of Punjab in interim Government to serve the interests of a political party, journalism died again in the hands of same journalist when he was rewarded with PCB highest post after puncture work, journalism  breathed his last when a second rated journalist was made Chairman PEMRA to regulate journalism, journalism died when columnist were rewarded with Ambassadorship.

This kind of sickening journalism needs matching lethality of journalism which arrived in the form of Mubashir Luqman and Amir Liaquat.

Mubashir Luqman created quite a stir against the mafias of traditional media but finally lost battle against dead but united mafia of media so there is no more Mubashir Luqman like program.

At this stage, Amir Liaquat arrived to replace him.

Did we ever wonder why Mubashir Luqman and Amir Liaquat broke records of popularity not under fake rating of media but under transparent you tube views rating. Why today’s young generation sit in front of television only to see Amir Liaquat because they can find solace to their anguish against the cheap and non credible daily dose of journalism in talk shows. Amir Liaquat is a wake up call to media, if they don’t wake up, social media is definitely a death warrant for such journalism.