Truth of “Freedom of Expression” is under threat by the Monopoly of Media Houses Functioning in both Electronic & Print Media.

593

By AHMAD JAWAD


Writer is Chief Visionary Officer of World’s First Smart Thinking Tank ” Beyond The Horizon” and most diverse professional of Pakistan. See writer’s profile at http://beyondthehorizon.com.pk/about/


According to my limited knowledge, nowhere in USA, Europe & civilised countries with rule of Law allow one media group to have Electronic & Print media simultaneously. That is why CNN, BBC, FOX, DW, EuroNews, CNBC have no “Newspaper”. Objective behind such regulation is to deny monopoly of one media group, because monopoly is a single worst threat to “True Freedom of Expression”. Remember when TV Licenses were granted in Musharraf, nobody from International media protested on such regulation of media monopoly which is killer to “Freedom of Expression”. Media Monopoly is death of truth & best tool of promulgating any agenda of vested interest within country or outside country. As a citizen, we must contemplate how to take up this matter legally. Cyrill incident must give us a food for thought ” why we should allow one media house to function simultaneously on electronic & print media. It’s not a question of victimising few media groups, it’s a question of preserving truth of ” Freedom of Expression” of a nation. It is too big a question to ignore. Our future depends on termination of such monopoly.


الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا پرمالکان کی اجارہ داری سے اظہار رائے کو خطرات درپیش ہیں

احمد جواد

میرے محدود علم کے مطابق یورپ اور امریکہ سمیت تمام مہذب ممالک میں جہاں قانون کی حکمرانی ہے کسی میڈیا گروپ کو الیکٹرانک اور پرنٹ دونوں  ذرائع ابلاغ کو بہ یک وقت رکھنے کی اجازت نہیں۔یہی وجہ ہے کہ Euro News, DW, FOX, BBC, CNN اور CNBC  جیسے اداروں کے اخبارات شائع نہیں ہوتے۔اس ضابطے کا مقصد  کسی بھی گروپ کو اجارہ داری دینے سے گریزکرنا ہے کیونکہ اجارہ داری حقیقی  آزادی اظہار کے لئے سب سے بڑا خطرہ ہے۔ یاد رہے جب مشرف دور میں ٹی وی چینلز کے لائسنس بانٹے گئےتو اس  وقت اجارہ داری کے اس ضابطے کے خلاف  میڈیا بین الاقوامی نے آواز بلند نہیں کی ۔ آزادی اظہار  کا گلا گھونٹنے والی میڈیا اجارہ داری حقیقت میں سچ کی موت ہے اور  ملک کے اندر اور باہر شخصی مفادات کا  کوئی بھی ایجنڈا مسلط  کرنےکا ذریعہ بن سکتی ہے۔ بطور شہری ہمیں سوچنا ہے کہ قانونی طور پر اس مسئلے سے کس طرح  نپٹا جا سکتا ہے۔ سیرل کے واقعہ سے اس سوال کو تقویت ملتی ہے کہ ایک ہی گروپ کو الیکٹرانک اور پرنٹ کے دو ادارے بیک وقت چلانے کی اجازت کیوں دی جائے؟ یہ میڈیا گروپوں کی گوشمالی کا نہیں بلکہ قوم کے آزادی اظہار کے حق کی پاسبانی کا سوال ہے۔ یہ اتنا بڑا سوال ہے کہ ا سے  نظر انداز کرنا ممکن نہیں۔ہمارےمستقبل  کا دار و مدار اس اجارہ داری کے خاتمے پر  ہے۔

Facebook Comments